日本イスラーム研究所 Japan Islamic Research Institute


MODI TO MAKE KASHMIR INTEGRAL PART OF INDIA
 BY ABROGATING ARTICLE 370 OF INDIAN CONSTITUTION
 
IS NAWAZ SHARIF AN IDIOT OR GENIUS????
کاروباری بھائی سے معرکہ آرائی ناگزیر ہے

 

IS NAWAZ SHARIF AN IDIOT OR GENIUS????NEED COMMENTS. 

 

Nawaz’s Delhi escapade  

 

S Iftikhar Murshed
Sunday, June 01, 2014
From Print Edition

 

 

Narendra Modi is India’s second prime minister from Gujarat – the first was Morarji Desai, whose term from 1977 to 1979 marked a turning point in the country’s politics inasmuch as he was also its first non-Congress head of government.

It is strangely ironic that Modi’s first working day in office on May 27 coincided with the 50th death anniversary of Jawaharlal Nehru. In a peculiar way it symbolised the replacement, perhaps permanently, of Nehruvian secularism by aggressive Hindu nationalism, or Hindutva, to which Modi has been committed since his childhood days.

Modi invited the leaders of Saarc countries plus Mauritius for his swearing in and they were all dutifully in attendance with the exception of Bangladesh which was represented by the speaker of its parliament. The message was unmistakably clear – New Delhi was the primus inter pares, or, the first among equals in the South Asian scheme of things.

The new Indian prime minister did not waste any time in rolling up his sleeves and getting down to work – the pomp and empty pageantry of Monday’s inauguration ceremonies were soon forgotten. An excruciatingly busy schedule was chalked up for the next day involving bilateral meetings with each of the eight leaders who were present in the Indian capital. Of these the Modi-Nawaz talks were of pivotal importance.

The positive gloss that was injected into the brief statement that Nawaz Sharif read out to the media after his 50-minute meeting with Modi was saturated with glittering half-truths and was therefore, misleading. He spoke about the positive outcome of the meeting as though there were no problems between the two countries. What he implied was that the hopes for the future could not be built by raking up the wounds of the past – confrontation had to give way to cooperation.

There was no mention of the Kashmir dispute in Nawaz Sharif’s hopelessly inadequate readout to the Indian media even though Islamabad has always maintained that this was the ‘core issue’ that had impeded the establishment of good-neighbourly, tension-free and cooperative relations between Pakistan and India.

The three foreign policy gladiators who had accompanied the prime minister to India and the Pakistan high commissioner in New Delhi had probably drafted the statement. If they had been alert they would have known that an hour earlier the Indian foreign secretary, Shujata Singh, had already spilt the beans. A more balanced statement could accordingly have been conjured up.

In a press briefing that afternoon, Foreign Secretary Singh said that Modi had, in no uncertain terms, driven home the point to his Pakistani counterpart that terrorism was the biggest hurdle in the way of New Delhi-Islamabad normalisation. Pakistan had to control the extremist groups on its soil and ensure that they do not perpetrate attacks against India. Furthermore, there was need for Islamabad to accelerate the trial of those responsible for the 26/11 terrorist outrage in Mumbai.

The implication was obvious. The dismantling of terrorist outfits on Pakistan’s soil is the sine qua non for the initiation of a structured dialogue between the two pathetically underdeveloped yet nuclear armed neighbours. Trust and confidence were the essential core ingredients for the establishment of mutually beneficial cooperation. Though Modi regurgitated the hackneyed, but nevertheless weighty Indian stance, Nawaz Sharif’s adviser on foreign affairs and national security, Sartaj Aziz was inexplicably exultant that the talks in New Delhi had achieved much more than what Pakistan had expected.

To a question whether the extradition of Dawood Ibrahim had been raised by Modi, Foreign Secretary Singh responded cryptically that there are certain things that cannot be disclosed to the media. The two prime ministers had, she said, agreed to take “immediate” measures to expand trade, economic and cultural cooperation. Modi had also accepted Prime Minister Nawaz Sharif’s invitation to visit Pakistan and mutually convenient dates would be worked out through diplomatic channels.

As if to play down the issue, she elaborated that similar invitations had been extended by the other South Asian leaders who had attended Modi’s inauguration and these had also been unhesitatingly accepted. It was uncertain precisely when the Indian prime minister would visit Pakistan. It could materialise next month, next year or some other, as yet, indeterminate date in the future. At all events it had been decided that the foreign secretaries of the two countries would meet to brainstorm the modalities for the restoration of the bilateral dialogue.

The omission of any reference to Kashmir in Nawaz Sharif’s grotesquely flawed statement to the Indian media and Shujata Singh’s press briefing set in motion a chain reaction of stern criticism in Pakistan. The analysts of the print and electronic media were all out with absurd theories – each one pretending that he or she is able to decipher the hidden implications of the Nawaz-Modi talks. A spirited commentator said that Modi had read the riot act to Nawaz Sharif and that the Pakistan prime minister had been served a “charge sheet”.

In what was obviously a fire-fighting exercise, Sartaj Aziz convened a press conference on Wednesday. In his opening remarks he was at pains to emphasise that the prime minister had told Modi that there was a need for the two countries “to pick up the threads from” the Lahore Declaration which was issued on the conclusion of the visit to Pakistan of Prime Minister Atal Bihari Vajpayee. Sartaj then pointedly reminded the media, “As you are aware, the Lahore Declaration of February 1999 calls for both governments to intensify their efforts to resolve all issues including the issue of Jammu and Kashmir.”

This explanation fell on deaf ears and Sartaj Aziz was bluntly asked why the prime minister had not specifically raised the Kashmir issue to which he responded almost apologetically, “But this does not mean the issue of Kashmir has been sidelined.” Nawaz and Modi, he said, dreamt the same dream of progress and prosperity for the peoples of South Asia, and, “in order to make this vision a reality the starting point of the talks with the Indian leadership was economic revival and development.”

The same day India’s new minister of external affairs, Sushma Swaraj, also addressed the media, and, without mincing words she said: “We want to have good relations with Pakistan but this can be successful only if terrorism ends. If the voices in our conversation are drowned by the sound of bombs, then the voice of neither nation will be heard – this is what our prime minister told the prime minister of Pakistan.”

Swaraj, a former chief minister of Delhi, is considered a BJP hardliner. As the leader of the opposition from December 2009 to May 2014 in the 15th Lok Sabha, she demanded the heads of ten Pakistanis in retaliation for the Indian soldier who had allegedly been beheaded when tensions soared between the two countries on the Line of Control a few months back.

Nawaz Sharif’s visit to New Delhi has generated a measure of goodwill. But a single cross-border incident can administer a crippling blow to the hope for durable peace. Modi and Nawaz have much in common, but more that sets them apart. Both are backed to the hilt by the corporate sector and both have returned the favour. Both fancy themselves as men on horseback destined to pull their respective countries back from the brink. The unanswered question is whether either of them has the ability to defuse the crises that are likely to emerge between their countries in the future.

The writer is the publisher of Criterion Quarterly.

Email: iftimurshed@gmail.com

 
 

ایسا معلوم ہوتا ہے کہ پاکستان کی خارجہ پالیسی

 کے نگہبانوں کو ہندوستان کے آئین کے آرٹیکل 370کی منسوخی کے مسئلہ کے بارے میں کوئی تشویش نہیں ہے۔ یہ بات اس پراسرار خاموشی سے عیاں ہے جو پاکستان نے اختیار کی ہے۔ انہیں غالباً اس کا احساس اور ادراک نہیں کہ اس آرٹیکل کی منسوخی کا، مسئلہ کشمیر سے براہِ راست تعلق ہے۔ ایسا محسوس ہوتا ہے کہ نواز حکومت کی خارجہ پالیسی کی ترجیحات میں اب مسئلہ کشمیر کو اوّلین اہمیت حاصل نہیں اور تجارت کے لیے بے تابی سر فہرست ہے۔ اگر پاکستان کی خارجہ پالیسی کے نگہبان یہ سمجھتے ہیں کہ وہ اس مسئلہ پر ہندوستان سے معرکہ آرائی سے بچ سکتے ہیں تو یہ ان کی مہلک غلطی ہوگی۔ اگرکوئی نوازشریف سے کہہ سکے تو یہ کہہ دے کہ ان کے کاروباری بھائی کے ساتھ اس مسئلہ پر معرکہ آرائی یکسر ناگزیر ہے۔

 

 

یہی وجہ ہے کہ وزیراعظم میاں نوازشریف آنکھ بند کیے اور صرف تجارت کے امکانات کے سراب میں مست کشاں کشاں دِلّی دربار گئے اور مودی کو جنہیں ہندوستان کے شکست خوردہ مسلمان ’موذی‘ کہتے ہیں، اپنا ’’کاروباری بھائی‘‘ قرار دے دیا، اور مودی سے ملاقات میں گھڑکیاں سننے کے بعد ابھی دِلّی میں دھرمیندر، ہیما مالنی، شترو گھن سنہا اور دوسرے ہندوستانی اداکاروں سے گلے مل رہے تھے کہ مودی سرکار نے اپنے اس عزم کا اظہار کردیا کہ جموں وکشمیرکے ہندوستان کے ساتھ مکمل انضمام کے لیے ہندوستان کے آئین میں کشمیر کی خاص حیثیت کے بارے میں آرٹیکل 370 منسوخ کرنے کے لیے اقدامات شروع کیے جا رہے ہیں۔     "

 

آصف جیلانی     

 

 

ایسا معلوم ہوتا ہے بلکہ یہ ثابت ہوگیا ہے کہ پاکستان کی وزارتِ خارجہ میں ہندوستان کے حالات، رجحانات، سیاسی جماعتوں کی حکمت عملی اور فکر پر نظر رکھنے اور ان کا صحیح تناظر میں تجزیہ کرنے والا کوئی شعبہ نہیں ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اس بارے میں سنجیدگی سے غور نہیں کیا گیا کہ ہندوستان کے حالیہ عام انتخابات میں گجرات کے دو ہزار مسلمانوں کے خون سے

داغ دار نریندر مودی کی قیادت میں بھارتیہ جنتا پارٹی کی فتح کے کیا مضمرات ہوں گے اور اس صورت میں پاکستان کی حکمت عملی کیا ہوگی۔ اگر مودی کی جیت کے بعد مودی سرکار نے اپنے انتخابی منشور پر عمل درآمد کا سلسلہ بغیر کسی نخیر اور القط کے شروع کردیا تو کیا ہوگا؟

یہی وجہ ہے کہ وزیراعظم میاں نوازشریف آنکھ بند کیے اور صرف تجارت کے امکانات کے سراب میں مست کشاں کشاں دِلّی دربار گئے اور مودی کو جنہیں ہندوستان کے شکست خوردہ مسلمان ’موذی‘ کہتے ہیں، اپنا ’’کاروباری بھائی‘‘ قرار دے دیا، اور مودی سے ملاقات میں گھڑکیاں سننے کے بعد ابھی دِلّی میں دھرمیندر، ہیما مالنی، شترو گھن سنہا اور دوسرے ہندوستانی اداکاروں سے گلے مل رہے تھے کہ مودی سرکار نے اپنے اس عزم کا اظہار کردیا کہ جموں وکشمیرکے ہندوستان کے ساتھ مکمل انضمام کے لیے ہندوستان کے آئین میں کشمیر کی خاص حیثیت کے بارے میں آرٹیکل 370 منسوخ کرنے کے لیے اقدامات شروع کیے جا رہے ہیں۔     

اب جب کہ ’’شیر‘‘ نوازشریف اپنی کچھار میں واپس چلے گئے ہیں، وزیراعظم مودی کے دفتر کے ایک وزیر ڈاکٹر جتندرہ سنگھ نے صاف صاف کہا ہے کہ ہندوستان کے آئین سے آرٹیکل370 منسوخ کردیا جائے گا جس کے تحت جموں و کشمیر کو خاص حیثیت اور محدود خودمختاری حاصل ہے۔ عام انتخابات کی مہم کے دوران مودی جب جموں و کشمیر گئے تھے تو انہوں نے اس معاملے میں عمداً شک کا پردہ ڈالنے کی کوشش کی تھی۔ بھارتیہ جنتا پارٹی کے منشور میں یہ صاف صاف کہا گیا ہے کہ پارٹی برسراقتدار آنے کے بعد آرٹیکل 370 منسوخ کرنے کے بارے میں اٹل ہے، لیکن جموں کے ایک انتخابی جلسے میں مودی نے کہا کہ وہ اس آرٹیکل کے بارے میں بات چیت کرنے کے لیے تیار ہیں۔ وہ یہ عندیہ دے رہے تھے کہ اس مسئلہ پر مفاہمت ہوسکتی ہے۔     

یہ محض جموں و کشمیر کے عوام کو تسلیاں دے کر گمراہ کرنے کی کوشش تھی، کیونکہ وہ یہ بات اچھی طرح جانتے ہیں کہ کشمیر کی خاص حیثیت کے بارے میں یہ آرٹیکل محض دِلّی سرکار کے حکم سے اور نہ پارلیمنٹ کے فیصلے سے چاہے وہ کتنی ہی اکثریت سے کیوں نہ منظور کیا جائے، آئین سے حذف نہیں کیا جاسکتا۔ اس آرٹیکل کو منسوخ کرنے کے لیے لازمی ہے کہ ریاست جموں وکشمیر میں دستور ساز اسمبلی تشکیل دی جائے۔ اُسی کو اس آرٹیکل کی منسوخی کے بارے میں صدرِ جمہوریہ کو سفارش پیش کرنے کا اختیار ہے۔ لیکن ایسی سفارش سے پہلے کئی کٹھن پل پار کرنے ہوں گے۔     

17 اکتوبر1949 ء کو ہندوستان کی دستور ساز اسمبلی میں جب جموں وکشمیر کی خاص حیثیت کے بارے میں آئین کا آرٹیکل 370  پیش کیا گیا تھا تو مولانا حسرت موہانی نے یہ سوال کیا تھا کہ کشمیر کے سلسلے میں یہ امتیاز کیوں؟ اس کے جواب میں، نہرو کی پہلی کابینہ کے وزیر بے محکمہ گوپال سوامی آینگر نے جو جموں و کشمیر کے مہاراجا ہری سنگھ کے دیوان رہ چکے تھے اور جنہوں نے یہ آرٹیکل مرتب کیا تھا، یہ وضاحت کی تھی کہ جموں و کشمیر دوسرے رجواڑوں کی طرح ابھی ہندوستان کے ساتھ الحاق کے لیے تیار نہیں ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ہندوستان نے جموں و کشمیر پر پاکستان کے ساتھ جنگ لڑی ہے اور گو جنگ بندی ہے لیکن ابھی حالات غیر معمولی ہیں کیونکہ جموں و کشمیر کی ریاست کا ایک حصہ ’’باغیوں اور دشمنوں‘‘ کے ہاتھ میں ہے۔ اُن کا اشارہ آزاد کشمیر کی طرف تھا۔ گوپال سوامی آینگر کا کہنا تھا کہ چونکہ کشمیر کے مسئلہ میں اقوام متحدہ منسلک ہے اس لیے اس کا بین الاقوامی پہلو ہے جس کی وجہ سے سخت الجھائو پیدا ہوگیا ہے جو کشمیر کے مسئلہ کے تسلی بخش تصفیہ کے بعد ہی ختم ہوگا۔ آینگر کا کہنا تھا کہ جموں و کشمیر کی دستور ساز اسمبلی ہی ریاست کے مستقبل کے بارے میں عوام کی خواہش کے مطابق فیصلہ کرے گی۔     

اس کا مطلب یہ ہے کہ ہندوستان کو امید تھی کہ ایک روز ریاست جموں و کشمیر دوسری ریاستوں کی طرح ہندوستان میں ضم ہوجائے گی۔ یہی وجہ ہے کہ آئین کے آرٹیکل 370 کا عنوان ’’عبوری انتظام‘‘ رکھا گیا تھا۔ دوسرے معنیٰ میں ریاست کا ہندوستان کے ساتھ انضمام صرف اسی صورت میں حتمی ہوگا جب کشمیر کا قطعی تصفیہ ہوگا جس کی کشمیر کے عوام توثیق کریں گے۔

یہ بات بے حد اہم ہے کہ اُس وقت جب دستور ساز اسمبلی میں آرٹیکل 370 پیش کیا گیا تھا اور اس پر بحث ہورہی تھی، وزیراعظم پنڈت نہرو امریکا کے دورہ پر تھے۔ وزیر داخلہ سردار پٹیل جنہیں بھارتیہ جنتا پارٹی اور مودی اپنا سیاسی گرو مانتے ہیں،آرٹیکل 370 منظور کرانے میں پیش پیش تھے اور شیخ عبداللہ کے اعتراضات کے باوجود وہ اس کی منظوری میں کامیاب رہے۔ یہ ستم ظریفی ہے کہ اب بھارتیہ جنتا پارٹی ہی اس کی تنسیخ کے لیے بے قرار ہے۔

سب سے زیادہ تعجب کی بات یہ ہے کہ بھارتیہ جنتا پارٹی آئین کے آرٹیکل 371 کے بارے میں پراسرار طور پر خاموش ہے جس کے تحت کشمیر کی طرح گوا میں غیر گوانیوںکے آباد ہونے اور ان پر زمین کی خریداری کی ممانعت کے لیے اسے خاص حیثیت حاصل ہے۔ اسی طرح اس آرٹیکل کے تحت ناگا لینڈ، میزورام اور آندھرا پردیش کے تلنگانہ علاقہ کو خاص حیثیت حاصل ہے۔ نہ جانے کیوں بھارتیہ جنتا پارٹی صرف کشمیر ہی کی خاص حیثیت ختم کرکے اس کا ہندوستان سے مکمل الحاق چاہتی ہے۔ وہ آخر گوا، ناگا لینڈ اور میزو رام کی خاص حیثیت کو کیوں برقرار رکھنا چاہتی ہے؟     

ایسا معلوم ہوتا ہے کہ پاکستان کی خارجہ پالیسی کے نگہبانوں کو ہندوستان کے آئین کے آرٹیکل 370کی منسوخی کے مسئلہ کے بارے میں کوئی تشویش نہیں ہے۔ یہ بات اس پراسرار خاموشی سے عیاں ہے جو پاکستان نے اختیار کی ہے۔ انہیں غالباً اس کا احساس اور ادراک نہیں کہ اس آرٹیکل کی منسوخی کا، مسئلہ کشمیر سے براہِ راست تعلق ہے۔ ایسا محسوس ہوتا ہے کہ نواز حکومت کی خارجہ پالیسی کی ترجیحات میں اب مسئلہ کشمیر کو اوّلین اہمیت حاصل نہیں اور تجارت کے لیے بے تابی سر فہرست ہے۔ اگر پاکستان کی خارجہ پالیسی کے نگہبان یہ سمجھتے ہیں کہ وہ اس مسئلہ پر ہندوستان سے معرکہ آرائی سے بچ سکتے ہیں تو یہ ان کی مہلک غلطی ہوگی۔ اگرکوئی نوازشریف سے کہہ سکے تو یہ کہہ دے کہ ان کے کاروباری بھائی کے ساتھ اس مسئلہ پر معرکہ آرائی یکسر ناگزیر ہے۔

 

 

آصف جیلانی