日本イスラーム研究所 Japan Islamic Research Institute


Also please visit my another website for some new materials:  http://www.ourquran.net  (Under Construction) 

 

366ڈرون حملے‘ 2ہزار200 سے زائد افراد جاں بحق

اسلام آباد (آئی این پی ) پاکستان میں ڈرون حملوں کا آغاز 2004ء میں ہوا‘ اب تک 2200 سے زائد افراد امریکی ڈرون حملوں میں جاں بحق ہو چکے ہیں۔ ہفتہ کو نجی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق 2004ء سے اب تک پاکستان میں 330 ڈرون حملوں میں 2200  افراد سے زائد جاں بحق ہوئے جبکہ غیر سرکاری اعداد و شمار کے مطابق366 ڈرون حملوں میں 2537 افراد زندگی کی بازی ہار گئے۔ غیر سرکاری اعداد و شمار کے مطابق ان حملوں میں 411عام شہری جبکہ 168 کمسن بچے بھی موت کی وادی میں چلے گئے۔ ان حملوں میں 1174افراد زخمی بھی ہوئے ہیں۔ پاکستان میں ڈرون حملوں کا آغاز 2004ء میں ہوا۔ 2005ء میں 3ڈرون حملوں میں 13افراد‘ 2007ء میں 4 ڈرون حملوں میں 48 ہلاک ہو گئے۔ 2008ء میں ان حملوں میں اضافہ ہو گیا اور 36حملوں میں 219افراد جاں بحق ہوئے۔ 2009ء میں 54ڈرون حملوں میں 350 جبکہ 2010ء میں سب سے زیادہ 122حملوں میں 608افراد موت کے منہ میں چلے گئے۔ 2011ء میں 72 حملوں میں 366جبکہ 2012ء میں 48 حملوں میں 222 اور اپریل 2013ء تک 12 ڈرون حملوں میں 62 افراد جاں بحق ہو گئے۔ بش انتظامیہ کے دور میں پاکستان میں 52جبکہ اوباما کے دور میں 314 ڈرون حملے کیے گئے۔

 

 

“Dirty Wars”: An immensely powerful anti-war film, uncovering Obama’s global “war on terror

“Dirty Wars”: An immensely powerful anti-war film, uncovering Obama’s global “war on terror” -

“Dirty Wars”: An immensely powerful anti-war film, uncovering Obama’s global “war on terror” -

Written by Andy Worthington
 
On May 13, I was privileged to be invited to a London preview of “Dirty Wars,” the new documentary film, directed by Richard Rowley and focusing on the journalist Jeremy Scahill’s investigations into America’s global “war on terrorism” — not historically, but right here, right now under President Obama.
In particular, the film, which opens in the US this weekend, and is accurately described by the New York Times as “pessimistic, grimly outraged and utterly riveting,” follows Scahill, who wrote it with David Riker, and is also the narrator, as he uncovers the existence of the shadowy organization JSOC, the Joint Special Operations Command, established by 1980, which is at the heart of the “dirty wars” being waged in Afghanistan, Pakistan, Yemen, Somalia and elsewhere.
I had seen rushes with representatives of the Center for Constitutional Rights at the London base of the Bertha Foundation, one of the backers of the film, last year, and I remembered the powerful sequences in Afghanistan, where Scahill found out about JSOC after meeting the survivors of a raid in Gardez by US forces in 2010 in which two pregnant women had been killed, and there had then been a cover-up.This involved US soldiers returning to the scene of their crime to remove bullets from the corpses — something difficult to forget once informed about.
The Afghan sequences — although involving JSOC rather than the military or other Special Forces — reminded me of the numerous similar raids based on chronically unreliable information, which have persistently led to the slaughter of civilians throughout the entire Afghan occupation — now nearing 12 years — or have led to the capture of people unrelated to insurgency, who ended up in Bagram, or, in the early years of the occupation, were sent to Guantánamo. Shockingly, Scahill discovers, during the course of his investigations that, in just one week in Afghanistan, there were 1,700 night raids similar to the one noted above.
The trailer for the film is below:
The powerful sequences in Afghanistan that I saw last year remain in the film, and are followed by visits to Yemen, where Scahill delves into the chilling story of Anwar al-Awlaki, the US citizen killed in a drone attack, and his 16-year old son Abdulrahman, killed in another attack — “not for who he was, but for who he might one day become,” as Scahill notes — and spends time with Anwar al-Awlaki’s distraught father.
In Yemen, it is disturbing to note how provocative and counterproductive US actions have been, in a troublingly undeclared war in which, as in Afghanistan, their every action appears to be counter-productive, either involving the slaughter of civilians, through attacks based on woefully inadequate intelligence, or the inflammatory and cold-blooded murder of Anwar al-Awlaki and his son.
Once Scahill reaches Somalia, and the chaos of permanent war and warlords, in which US involvement is even more inexplicable, it becomes horribly apparent, as he says at the conclusion of the film, “The world has become America’s battlefield, and we can go everywhere.”
As the New York Times explained in its review of the film, we learn that JSOC “operates not only in Afghanistan but also in countries on which no war has been declared. Algeria, Indonesia, Jordan and Thailand are mentioned.”
Disturbingly, we also see JSOC emerge from the shadows, as their commander, Vice Adm. William H. McRaven, discovered by Scahill involved in paying hush money to the family of the pregnant women who died in Gardez, later is praised as a national hero as JSOC lead the mission to kill Osama bin Laden.
I urge you, if you can, to see “Dirty Wars”, which, as I noted above, opens in US cinemas this weekend (and in the UK later this year), and or even to organize a screening yourself.
This is how it is described on the website:
“Dirty Wars” follows investigative reporter Jeremy Scahill, author of the international bestseller Blackwater, into the heart of America’s covert wars, from Afghanistan to Yemen, Somalia and beyond.
Part political thriller and part detective story, “Dirty Wars” is a gripping journey into one of the most important and underreported stories of our time.
What begins as a report into a US night raid gone terribly wrong in a remote corner of Afghanistan quickly turns into a global investigation of the secretive and powerful Joint Special Operations Command (JSOC).
As Scahill digs deeper into the activities of JSOC, he is pulled into a world of covert operations unknown to the public and carried out across the globe by men who do not exist on paper and will never appear before Congress. In military jargon, JSOC teams “find, fix, and finish” their targets, who are selected through a secret process. No target is off limits for the “kill list,” including US citizens.
Drawn into the stories and lives of the people he meets along the way, Scahill is forced to confront the painful consequences of a war spinning out of control, as well as his own role as a journalist.
We encounter two parallel casts of characters. The CIA agents, Special Forces operators, military generals, and US-backed warlords who populate the dark side of American wars go on camera and on the record, some for the first time. We also see and hear directly from survivors of night raids and drone strikes, including the family of the first American citizen marked for death and being hunted by his own government.
“Dirty Wars” takes viewers to remote corners of the globe to see first-hand wars fought in their name and offers a behind-the-scenes look at a high-stakes investigation. We are left with haunting questions about freedom and democracy, war and justice.
“Haunting questions about freedom and democracy, war and justice” is one way of putting it. Personally, after seeing familiar examples of homicidally inept operations in Afghanistan, and then seeing how America has created an enemy in Yemen, in drone strikes that have killed civilians and have also involved assassinating US citizens, and are engaged in alliances with extremely dubious warlords in Somalia, I reacted with genuine horror when Jeremy explained how, for JSOC, the entire world is now a battlefield, and the inept, unaccountable and counter-productive operations that are now America’s way of waging war are taking place in an unknown number of countries.
At that point, I realized that, to deal with everything that is going on, the film would last for days, and would have to take us to places where, unlike Afghanistan, Pakistan, Yemen and Somalia, few journalists, if any, have yet uncovered the full extent of what is going on.
Most of all, the horror I felt at this point was a profound opposition to war — not a novel feeling for me, as a lifelong pacifist, but a powerful indictment of how, under President Obama, being opposed to war — modern, dirty wars conducted in a senseless manner below the radar — is imperative for anyone with a modicum of common sense and humanity.
Note: Jeremy Scahill is also the author of Dirty Wars: The World Is a Battlefield, published in the UK by Serpent’s Tail.

 

امریکہ کی جنگ کو گود لینے والے

On Friday, June 7th, 2013

جنرل اشفاق پرویز کیانی نے اپنے ایک حالیہ بیان میں فرمایا ہے کہ دہشت گردی کے خلاف امریکہ کی جنگ ہماری جنگ ہے اور ہم نے اس جنگ میں شرکت کے ذریعے اپنے مفادات کا تحفظ کیا ہے۔
مثل مشہور ہے ’’ہاتھی کے پائوں میں سب کا پائوں‘‘۔ اس کا مفہوم یہ ہے کہ طاقتور کا ساتھ سب ہی دیتے ہیں، خواہ طاقت ور کتنا ہی غلط کیوں نہ ہو۔ دنیا میں جتنی باطل طاقتیں رہی ہیں ان کی حمایت کرنے والے اسی ذہنیت کے حامل تھے۔ نمرود میں اس کے سوا کوئی خوبی نہ تھی کہ وہ طاقتور تھا۔ فرعون میں اس کے سوا کوئی حسن نہ تھا کہ وہ قوی تھا۔ لیکن یہ انسانی ذہن کی پستی کی انتہا نہیں ہے۔ انسانی ذہن کی پستی کی انتہا یہ ہے کہ اگر تم دشمن کو شکست نہیں دے سکتے تو اس کے ساتھ مل جائو۔ پاکستان کے جرنیلوں نے امریکہ کے حوالے سے یہی کیا ہے۔ امریکہ نے نائن الیون کے بعد جنرل پرویزمشرف کے سامنے سات مطالبات رکھے تو اس کا خیال تھا کہ جنرل پرویزمشرف ان میں سے تین چار مطالبات تسلیم کریں گے، مگر جنرل پرویزمشرف نے سات کے سات مطالبات کو تسلیم کرلیا۔
لوگ سمجھتے ہیں کہ بزدلی ایک ذہنی و نفسیاتی عارضہ ہے۔ بلاشبہ ایسا ہی ہے مگر اس عارضے کی جڑیں بھی اخلاقیات میں پیوست ہوتی ہیں۔ نائن الیون کے بعد امریکہ نے ملا عمر کے سامنے بھی دو ہی صورتیں رکھی تھیں: تم یا تو ہمارے ساتھ ہو یا ہمارے خلاف ہو۔ ملا عمر نے صاف کہا کہ ہم نہ تمہارے ساتھ ہیں نہ تمہارے خلاف ہیں۔ ہم حق کے ساتھ ہیں اور باطل کے خلاف ہیں۔ ان کو جنرل پرویزمشرف کے بھیجے ہوئے علماء نے بھی سمجھایا کہ ایک اسامہ بن لادن کے لیے پوری ریاست کو دائو پر لگادینا ٹھیک نہیں۔ مگر ملا عمر کی اخلاقی بنیاد مستحکم تھی، چنانچہ انہوں نے کہا کہ اسامہ کو حوالے کرنے کی ایک ہی صورت ہے کہ ان کے خلاف ٹھوس شہادت پیش کی جائے، بصورت ِدیگر ہم اسلامی تعلیمات کی رو سے اپنے مہمان کو ہرگز امریکہ کے حوالے نہیں کریں گے خواہ اس کا نتیجہ کچھ بھی کیوں نہ ہو۔ اقبال نے کبھی کہا تھا ؎
اگر ملک ہاتھوں سے جاتا ہے جائے
تُو احکام حق سے نہ کر بے وفائی
ملا عمر نے اقبال کے اس مثالیے یا Idealکو 20 ویں صدی میں حقیقت بناکر دکھادیا۔ لیکن جنرل پرویز امریکہ کی ایک دھمکی پر دبک اور پچک کر رہ گئے۔ اس کی وجہ یہ تھی کہ ان کی شخصیت کی اخلاقی بنیادیں یا تو موجود ہی نہیں تھیں، یا انتہائی کمزور تھیں۔ بعض لوگ کہتے ہیں کہ ا گر جنرل پرویزمشرف امریکہ سے ’’تعاون‘‘ نہ کرتے تو امریکہ پاکستان کو واقعتاً پتھر کے دور میں واپس بھیج دیتا۔ پہلی بات تو یہ کہ جنرل پرویز نے امریکہ کے ساتھ ’’تعاون‘‘ نہیں کیا۔ وہ امریکہ کے لیے کرائے کے قاتل کا کردار ادا کرنے لگے، یہاں تک کہ یہ کردار برسوں پر محیط ہوگیا۔ دوسری بات یہ کہ اللہ تعالیٰ بہادروں کا ساتھ دیتا ہے۔ بہادر کمزور بھی ہو تو اللہ اسے قوی کردیتا ہے، اور بزدل طاقتور بھی ہو تو اللہ تعالیٰ اسے کمزور بنادیتا ہے۔ امریکہ نے جنرل پرویزمشرف کو دھمکی دے کر ان پر ایک نفسیاتی اور اعصابی حملہ کیا تھا، اور جنرل پرویز ایک ہی حملے میں ڈھیر ہوگئے۔ وہ امریکہ کی مزاحمت کرتے تو امریکہ پاکستان کو نشانہ بنانے کی جرأت نہیں کرسکتا تھا۔ اس کی وجہ یہ تھی کہ پاکستان ایک ایٹمی ملک ہے اور ایٹمی ملک کو ناراض کرنے کے مضمرات ہولناک ہوسکتے تھے۔ امریکہ اچھی طرح جانتا تھا کہ پاکستان کے بغیر وہ نہ افغانستان میں داخل ہوسکتا ہے، نہ وہاں طویل جنگ لڑسکتا ہے۔ پاکستان اُس وقت 17کروڑ لوگوں کا ملک تھا اور اس کے عدم استحکام کے اثرات پورے مشرق وسطیٰ اور پورے وسطی ایشیاء پر مرتب ہوتے۔ جنرل پرویز مزاحمت کرتے تو امریکی ان تمام اندیشوں میں مبتلا ہوتے۔ مگر جنرل پرویز نے ایک ٹیلی فون کال پر ہتھیار ڈال کر امریکہ کو ہر اندیشے اور ہر خطرے سے بے نیاز کردیا۔
لیکن امریکہ کی جنگ کو گود لینے کے حوالے سے دیکھا جائے تو جنرل کیانی کا معاملہ جنرل پرویز سے بھی ابتر ہے۔ کیا جنرل کیانی کو اندازہ نہیں ہے کہ انہوں نے امریکہ کی جنگ کو گود لے کر کن کن چیزوں کی خلاف ورزی کی ہے؟ انہوں نے کن کن چیزوں کو پامال کیا ہے؟
اسلام کہتا ہے کہ اگر تمہارے پڑوس میں اہلِ ایمان جبر کا شکار ہوں تو ان کی مدد کرو خواہ تم کمزور ہی کیوں نہ ہو۔ مگر پاکستان کے جرنیلوں نے پڑوس میں آباد اہلِ ایمان کی مدد کرنے کے بجائے باطل کی ہرممکن اعانت کی۔ ایک حدیث شریف کا مفہوم یہ ہے کہ اسلامی ملک کا ایک انچ کافروں کے حوالے کرنا حرام ہے، مگر پاکستان کے حکمرانوں نے پورا ملک امریکہ کے حوالے کردیا۔ اس اعتبار سے دیکھا جائے تو جنرل کیانی باطل کی پشت پناہی کو اپنی جنگ قرار دے رہے ہیں۔
تاریخ کا مطالعہ بتاتا ہے کہ انسان محض اپنی عزت و تکریم کی خاطر بھی جبر و استبداد کی مزاحمت کرتا ہے۔ ویتنام ایک لادین ملک تھا مگر اس نے امریکہ کے خلاف دس سال تک جنگ لڑی اور اسے جیت کر دکھایا۔ کیوبا ایک کمیونسٹ ملک ہے اور پاکستان کے مقابلے پر اس کی حیثیت ایک نقطے سے زیادہ نہیں، مگر اس کے باوجود اُس نے آج تک امریکہ کے سامنے ہتھیار نہیں ڈالے۔ لیکن پاکستان کے جرنیلوں کے لیے انسان کی عزت اور تکریم کا بھی کوئی مفہوم نہیں ہے۔ انہیں ایک ایسی پُرتعیش زندگی بسر کرنے کی عادت ہے جس کے آگے کسی چیز کی کوئی حیثیت نہیں۔
جو شخص مذہب‘ اخلاق اور انسان کی تکریم کو نہیں مانتا وہ کم از کم فائدے اور نقصان کا تو قائل ہوتا ہی ہے۔ لیکن پاکستان کے جرنیل تو امریکہ کی جنگ کے حوالے سے فائدے اور نقصان کے بھی قائل نہیں رہے۔ یہ ایک سامنے کی بات ہے کہ امریکہ کی جنگ میں شریک ہوکر ہم نے اپنی آزادی اور خودمختاری کا سودا کیا اور پوری قوم کو ذلت کے شدید احساس میں مبتلا کیا، اور یہ ایک بہت ہی بڑا قومی نقصان ہے۔ ہم نے اس جنگ میں 30ہزار شہریوں اور 5 ہزار فوجیوں کی قربانی دی ہے، اور یہ اتنا بڑا نقصان ہے کہ بھارت کے ساتھ دو بڑی جنگوں میں بھی ہمارا اتنا جانی نقصان نہیں ہوا۔ اقتصادی ماہرین کے مطابق اس جنگ نے ہمیں دس برسوں میں 70 ارب ڈالر سے زیادہ کا مالی نقصان پہنچایا ہے۔ ہم نے اس جنگ کے نتیجے میں چالیس لاکھ سے زیادہ لوگوں کو اپنے ہی ملک کے اندر ’’بے گھر‘‘ کیا ہے۔ اس جنگ نے پاکستان کو دنیا بھر کے خفیہ اداروں کی چراگاہ بنادیا ہے۔ اس جنگ نے پوری قوم بالخصوص خیبرپختون خوا اور قبائلی عوام کی نظروں میں فوج کی ساکھ کو ناقابلِ تلافی نقصان پہنچایا ہے۔ اس کے باوجود بھی جنرل کیانی کہہ رہے ہیں کہ یہ جنگ ’’ہماری‘‘ جنگ ہے! سوال یہ ہے کہ کیا ہمارے جرنیل فائدے اور نقصان کے فہم سے بھی نیچے کھڑے ہیں؟
امریکہ اور اس کی جنگ کا ایک پہلو یہ ہے کہ دنیا بھر میں امریکہ سب سے زیادہ پاکستان میں غیر مقبول ہے۔ پاکستان کے 80 فیصد سے زیادہ لوگ امریکہ کی پالیسیوں کی وجہ سے اسے پسند نہیں کرتے۔ یہی معاملہ دہشت گردی کے خلاف امریکی نام نہاد جنگ کا ہے۔ پاکستان کے لوگوں کی عظیم اکثریت پہلے دن سے آج تک اس جنگ کو ناپسند کرتی ہے۔ لیکن جنرل کیانی کے نزدیک ان حقائق کی بھی اہمیت نہیں۔ اگر ہوتی تو وہ امریکہ کی جنگ کو گود میں لے کر لوریاں نہ سنا رہے ہوتے۔
اس جنگ کے ساتھ تازہ ترین حادثہ یہ ہوا ہے کہ خود امریکہ نے اپنی جنگ کو ’’الوداع‘‘ کہہ دیا ہے۔ امریکی کہہ رہے ہیں کہ جب طالبان سے مذاکرات ہوسکتے ہیں تو جنگ کیوں کی جائے؟ یہ جنگ اور طالبان کے حوالے سے امریکہ کے مؤقف میں 180 ڈگری کی سطح کی تبدیلی ہے۔ لیکن جنرل کیانی امریکہ سے بھی زیادہ امریکہ کے وفادار بن کر کہہ رہے ہیں کہ یہ جنگ ہماری جنگ ہے۔ تجزیہ کیا جائے تو جنگ کے سلسلے میں امریکہ کے مؤقف میں تبدیلی پر ہمارے جرنیلوں کو کہنا چاہیے تھا کہ جان بچی سو لاکھوں پائے، لوٹ کے بدھو گھر کو آئے… مگر جنرل اشفاق پرویزکیانی کے بیان سے ظاہر ہورہا ہے کہ ہم نہ جان بچانا چاہتے ہیں، نہ لاکھوں پانا چاہتے ہیں اور نہ لوٹ کر گھر کو آنا چاہتے ہیں۔ لیکن سوال یہ ہے کہ اس کی وجہ کیا ہے؟
اس سوال کا ایک ہی جواب ہے اور وہ ہے جرنیلوں کا تکبر۔ اگر ہمارے جرنیل یہ تسلیم کرلیں کہ ہم نے گزشتہ دس برسوں میں اپنی نہیں امریکہ کی جنگ لڑی ہے تو انہیں قوم کے سینکڑوں سوالات کا جواب دینا پڑ جائے گا، چنانچہ جنگ کے جس بچے کو امریکہ نے گود سے اتار پھینکا ہے جنرل کیانی اسے بھی گود میں اٹھائے پھررہے ہیں، بلکہ وہ قوم کو یقین دلارہے ہیں کہ ہم نے اس بچے کو گود لے کر تاریخ ساز کارنامہ انجام دیا ہے۔ لیکن تاریخ بہت سفاک ہوتی ہے، وہ بڑے بڑوں کا حساب بے باق کردیتی ہے۔ چنانچہ وہ دن دور نہیں جب تاریخ فیصلہ کرے گی کہ امریکہ کی جنگ کو گود لے کر ہمارے جرنیلوں نے کیا کیا تھا۔

شاہنواز فاروقی

 

کپتان کا سونامی اور میرٹ

…مسعود انور…
کپتان کا سونامی وقت کے ساتھ ساتھ اپنا رنگ دکھا رہا ہے۔ صوبہ خیبر پختون خوا میں ایک مخلوط حکومت کے قیام کے ساتھ ہی کپتان کا امتحان شروع ہوچکا ہے۔ کراچی تا خیبر، کپتان کو خاموش عوام نے صرف ایک نعرے پر ووٹ دیے، اور یہ نعرہ تھا انقلاب کا۔ زرداری اور نوازشریف کی فرینڈلی اپوزیشن و حکومت سے عاجز عوام ایک تیسری طاقت کی تلاش میں تھے۔ ایسے میں ان کو تحریک انصاف میں امید کی نئی روشنی دکھائی دی اور یہ عوام بلا کسی امتیاز، ڈر اور خوف کے عمران خان کے نمائندوں کو ووٹ دینے پہنچ گئے۔ بلاشبہ اگر سندھ میں انتخابات منصفانہ ہوتے تو عمران خان کو کراچی سمیت سندھ کے شہری علاقوں سے جیتنے سے کوئی نہیں روک سکتا تھا۔
مگر عمران خان کے انتخابات کے فوری بعد کیے جانے والے اقدامات نے ان کے نعرے کے سامنے ایک سوالیہ نشان لگا دیا ہے۔ سب سے پہلے پرویز خٹک کی بطور وزیراعلیٰ نامزدگی پر ہی ان کے شہری ووٹرز حیران و پریشان ہوکر ایک دوسرے کا منہ تکنے لگے تھے۔ اس ایک نامزدگی نے ہی عمران خان کے نوجوان اور کرپشن سے پاک قیادت کے دعوے کا پول کھول دیا تھا۔ پرویزخٹک پر الزامات کی فہرست زرداری سے بھی زیادہ طویل ہے۔ زرداری پرتمام الزامات کرپشن اور مالی بدعنوانی کے ہی ہیں مگر پرویز خٹک پر لگائے گئے الزامات میں مسلسل وفاداریاں تبدیل کرنے کے ساتھ ساتھ اسمگلنگ بھی شامل ہے۔ اب کپتان کے سونامی کی ایک اور بلندی خیبر پختون خوا سے تحریک انصاف کو ملنے والی خواتین کی قومی اسمبلی کے لیے مخصوص نشستوں پر نامزدگیاں ہیں۔ تحریک انصاف کو خیبر پختون خوا میں اس کے صوبائی اسمبلی میں ارکان کے تناسب سے 4 نشستیں دی گئی ہیں۔ ان 4 نشستوں میں سے ایک پر خیبر پختون خوا کے وزیراعلیٰ پرویز خٹک کی بھابھی نفیسہ خٹک کی نامزدگی کی گئی ہے۔ ایک اور نشست پر نفیسہ خٹک کی بھتیجی مسرت احمد زیب رکن قومی اسمبلی بن گئی ہیں۔ جبکہ مزید ایک اور نشست پر پرویز خٹک کی ایک اور بھتیجی ساجدہ ذوالفقار نوازی گئی ہیں۔ اس طرح چار میں سے تین نشستوں پر گھر میں ہی بندر بانٹ کرلی گئی۔
خاندانی سیاست کے خاتمے کا بلند آہنگ لہجے میں دعویٰ کرنے والے عمران خان کی پارٹی میں سیٹوں کی بندر بانٹ کا یہ آغاز نہیں ہے۔ خیبر پختون خوا کی موجودہ صوبائی اسمبلی میں تحریک انصاف کے ٹکٹ پر خواتین کی مخصوص نشستوں پر کامیاب ہونے والی نسیم حیات اور عائشہ نعیم آپس میں فرسٹ کزن ہیں۔ اگر نادیہ شیر کو بھی گن لیا جائے تو صرف صوابی سے ہی تین خواتین کو صوبائی اسمبلی میں بھیج دیا گیا ہے، وغیرہ وغیرہ۔
یہ تو کپتان کا آغاز ہے۔ ابھی منزلِ شوق تک پہنچنے میں مزید کئی مرحلے باقی ہیں جہاں پر ہم دیکھ سکیں گے کہ کپتان کے دعوے کیا تھے اور ان کا عمل کیا ہے۔ ابھی انتخابات کا اعلان بھی نہیں ہوا تھا اور عمران خان کے ملک گیر دھواں دھار جلسوں کی مہم کا آغاز ہوا تھا، اسی وقت میں نے ایک کالم ’’ریس کا نیا گھوڑا… عمران خان‘‘ کے نام سے سپردِ قلم کیا تھا۔ یہ کالم آج بھی میری ویب سائٹ پر ملاحظہ کیا جاسکتا ہے۔ اُس وقت بھی میں نے صرف ایک سوال اٹھایا تھا۔ میں نے کہا تھا کہ عمران خان اپنے جلسوں پر اٹھنے والے اربوں روپے کے اخراجات کا جواب دے دیں تو دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہوجائے گا۔ ملک کو کرپشن سے پاک کرنے کا اعلان کرنے والے یہ کیوں نہیں بتاتے کہ الیکٹرونک میڈیا کو ان کے جلسوں اور تشہیری مہم نشر کرنے کے بھاری بھرکم اخراجات کون برداشت کر رہا ہے۔
عمران خان صرف ایک بات بتادیں کہ ان کو اتنے بھاری بھرکم فنڈز فراہم کون کررہا ہے؟ اس سے ہر شخص بآسانی خود اندازہ لگالے گا کہ عمران خان اپنے دیگر دعووں میں کتنے سچے ہیں۔ سیدھی سی بات ہے کہ جو لوگ عمران خان پر بھاری سرمایہ کاری کررہے ہیں، اس کے جواب میں وہ عمران خان سے کرپشن سے پاک پاکستان نہیں چاہتے۔ یہ سرمایہ کار پاکستان میں اپنے ایجنڈے کی تکمیل چاہتے ہیں۔ تاریخ بتاتی ہے کہ یہ سرمایہ کار بین الاقوامی تحریکِ انقلاب کے پس پشت عالمی بینکار ہیں۔ انہوں نے ہی روس کا انقلاب برپا کیا۔ یہی فرانس میں انقلاب لائے۔ انہوں نے ہی امریکا و برطانیہ میں اپنی کٹھ پتلی حکومتیں قائم کیں، اور پھر بتدریج پورے یورپ، مشرق وسطیٰ اور پھر پوری دنیا پر قابض ہوتے چلے گئے۔
تاریخ ہمیں یہ بھی بتاتی ہے کہ ایجنڈے کی تکمیل کے لیے یہ عالمی بینکار محض حکومت میں ہی اپنے کارندے نہیں بٹھاتے بلکہ ان کے لیے حزب اختلاف بھی اتنی ہی اہم ہوتی ہے۔ فوج و بیوروکریسی پر بھی یہ عالمی بینکار اتنی ہی محنت کرتے ہیں جتنی سیاستدانوں پر۔ کسی بھی شخص پر اسی وقت اعتماد کیا جاسکتا ہے جب اس کے قول و فعل میں تضاد نہ ہو۔ ایک بوڑھے کرپٹ شخص کو ایک صوبے کا وزیراعلیٰ بناکر عمران خان نے اپنا ایجنڈا سب کو بتادیا ہے۔ اب یہ روزِ روشن کی طرح عیاں ہوچکا ہے کہ عمران خان کا انقلاب کا اعلان ایسا ہی ہے جیسا الطاف حسین امن وامان کے قیام اور مجرموں کے خاتمے کے لیے کرتے رہتے ہیں۔ جس طرح الطاف حسین دھڑلے سے کہتے ہیں کہ ایم کیوایم ایک قومی جماعت ہے، اس میں لسانیت اور مجرموں کے لیے کوئی جگہ نہیں ہے، بالکل اسی طرح عمران خان خاندانی سیاست کے خاتمے کا اعلان کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ تحریک انصاف نوجوانوں کو متحرک کرکے کرپشن سے پاک انقلاب لائے گی۔
جان لیجیے کہ ون ورلڈ گورنمنٹ کے قیام کے لیے ہر طرح کے کارندے موجود ہیں، چاہے یہ سیاست کا لبادہ اوڑھے زیر زمین دنیا کے باسی ہوں یا ایک نیا پاکستان بنانے کے داعی۔ ان کے آقا ایک ہی ہیں جو ان کو تحفظ بھی فراہم کرتے ہیں اور مالی معاونت بھی۔ یہی ان کو کام کا ٹائم ٹیبل دیتے ہیں اور یہی تقریروں کا اسکرپٹ بھی۔ اس دنیا پر ایک عالمگیر شیطانی حکومت کے قیام کی سازشوں سے خود بھی ہشیار رہیے اور اپنے آس پاس والوں کو بھی خبردار رکھیے۔ ہشیار باش۔
n
n

 

 

ڈرون حملے اور القاعدہ

پاکستان میں دہشتگردی اور بدامنی کے ذمہ دار امریکا اور اس کے حلیف ہیں‘ لیاقت بلوچ

On Friday, April 19th, 2013
p13 فرائیڈے اسپیشل: لیاقت بلوچ صاحب! ملک کے موجودہ حالات اور قومی و سیاسی تاریخ کے حوالے سے 11 مئی کے عام انتخابات کی کیا اہمیت ہے، آپ ان انتخابات سے کیا توقعات رکھتے ہیں؟ لیاقت بلوچ: انتخابات معمول کا جمہوری عمل ہے جس میں رائے دہندگان اپنے نمائندوں کا انتخاب کرتے ہیں۔ حکومت نے اپنی ...