日本イスラーム研究所 Japan Islamic Research Institute


Posted by: Abdulrahman Nounu and Ahmad Jomaa 

ABOUT NEW PHAROAH

AbdulFattah al-Sisi

 We salute you. We all rise to congratulate and honour the magnificent man who has managed to maintain a moral code so profoundly. The moral code of Fir’awn (I mean) has been a long-standing tradition maintained and cultivated over the centuries to suit the needs of the wealthy and the advantaged alike. Sisi is the greatest ambassador of this tremendous art in our time.

Critics of Mubarak had long since acknowledged that he lacked the destructive, murderous nature of a true leader. Mubarak tried his best, but he just lacked a deep insight into the effective use of overwhelming force, violence and terror required when propagating a tyrannical, military dictatorship. The man killed too sparingly and subtly, like his heart wasn’t really into it and he was never quite able to join the murderers’ halls of fame. After 40 years of half-hearted oppression, Egypt needed a change.

It didn’t take long for Morsi to make it clear that he had no intention of stealing from the poor and giving to the rich,[1] so obviously he was thrown out. Sisi on the other hand never had this problem, and unlike Mubarak he knew how to oppress like the best of them. In the space of just one year Sisi managed to give the Assad killing machine a run for its money, killing over a whopping three-thousand in less than four hours and throwing many more in jails.[2] As a true student of Fir’awn, he has managed to emulate his Sunnah of tyranny with flawless devotion.

Popular support, the likes of which Obama and Cameron can only dream of, is no sweat for the soon-to-be-crowned grand dictator of Egypt.[3] An overwhelming percentage of true Egyptians pledge their allegiance to the coup. Informative government polls tell us that an staggering 88 to 98% of true Egyptians pledge their unwavering support for Sisi, in fact only 1.9% oppose him.[4] But don’t worry, the military assures us that these polls are accurate to a fraction of a percent. And I believe them, these are, after all, the scholars who cured AIDS[5] with an ingenious contraption that cures the disease through the consumption of miraculous Kofte Kebabs.[6]

So it’s true that the election results were yet to be published at the time of writing this article, but Sisi has left no doubt that he will eventually emerge victoriously as the president of Egypt. How can anyone dispute Sisi’s right to rule when Anwar Sadat himself came to Sisi in a dream and told him he would be President,[7] and when Husni Mubarak called him ‘Egypt’s hope’?[8] Allāhu Akbar! Since when were silly little things like elections or ‘democracy’ an issue? Most feeble leaders may indeed be confined by such things, but not Sisi. People have been voting since the January 2011 revolution but that didn’t make any difference, so why should the latest elections matter? If poor, foolish people in Egypt accidentally vote for someone else, Sisi will just have that person in the jail cell next to Morsi, and on death row in a jiffy. Elections in Egypt are really considered to be more of a ‘light suggestion’ as to who should be in power rather than a mandate. I don’t know why they even bothered appointing an ‘Interim President’ – what was his name again? From the first moment Sisi emerged in those cool sunglasses, I knew what was missing was a crown on his head.

I mean, imagine if the people were allowed to choose their own president! People are like children, they don’t know what’s good for them, and just like children, even if they didn’t like their veggies, they should be rammed down their throats all the same. The vegetable in this case is the Field-Martial, Minister-of-Defence, Chairman-of-the-Military-Council, Deputy-Prime-Minister and soon-to-be-President of Egypt: Abdulfatah Al Sisi. Gosh, look at all those titles! Māshā’Allāh tabārak Allāh. However to be fair this whole vegetable comparison does seem like a disservice to Sisi, as vegetables are no way near as impressive at murdering their opposition or imprisoning people with ‘silly opinions’.

Sisi has learned well from the right-wing in the West. The right-wing recognised that the best wayto support an expensive military campaign would be to tell everyone that the “terrorists” would be attacking us whilst stealing our jobs and abusing the NHS. This is from the inside of course, hospitals are nothing but terrorist training camps, some reports even claim the terrorists might be doctors, nurses or even hospital directors[9]but don’t listen to them. Terrorists! It was a tactic that Sisi employed effectively when he decided that the best way to show everyone who the terrorists were was to butcher a bunch of annoying ‘pro-democracy’ protesters who inconsiderately caused ‘traffic congestion.’[10] Luckily they were unarmed peaceful protesters so it was like shooting fish in a barrel.

Sisi truly is an inspiring leader with his priories sorted. For example just take a look at the genius of the Sisi political campaign. Western politicians tend to go around kissing babies, cracking jokes, hosting question and answer sessions, trying to understand the needs of their constituents and generally wasting time and effort—not Sisi! Instead, Sisi just funded a military campaign, allowed the economy to fall apart[11] and starved his electorate, telling them to deal with it. Think of how much money time and effort he saved!

Sisi is about to cross the finish line and cement his power once and for all over all of Egypt. I am pretty confident that nothing can stand in his way… well so long as the rabble of ‘pro-democracy’ Islamists don’t continue to stand together; don’t remain steadfast in their opposition of injustice; and carry on pontificating over whether or not Sisi is a ‘Hākim’ instead of actually doing anything. Sisi will reign unchallenged and will probably prop up a couple of his own pyramids in no time.

I recommend that all students of Tyranny pay close attention to the new Pharaoh of Egypt and hisnew groove; it promises to be more brutal, fascist and oppressive than ever before. Silly Mubarak,this is how you run a dictatorship.

 

Notes:


 Egypt bans unlicensed preachers, tightens grip on mosques       

By Maggie Fick and Ali Abdelaty

CAIRO (Reuters) - Egypt has banned unauthorized preachers from giving sermons or teaching Islam in mosques and other public places, according to a decree on Saturday marking a further step in official efforts to curb Islamist influence.

 

The decree issued by interim President Adly Mansour's office also threatened fines and jail for freelance imams, especially if they wore clerical garments associated with the respected Al-Azhar center of Sunni learning in Cairo.

 

Selected employees of the religious endowments ministry will be empowered by the justice ministry to arrest anyone caught violating the decree, it added.

 

"No preacher will mount a minbar next Friday without a permit," the ministry said on its Facebook page, referring to the traditional raised pulpit in a mosque. The decision was taken to "preserve national security," it said.

 

The military-backed government sees mosques as recruiting grounds for Islamist parties and has moved to bring them under tighter control since the army toppled President Mohamed Mursi of the Muslim Brotherhood last July.

 

It said in April it had licensed more than 17,000 state-approved clerics to give Friday sermons to stop mosques from falling "into the hands of extremists." [ID:nL6N0N22CZ] It also disclosed it had removed 12,000 unapproved preachers.

 

Many Egyptians pray at small neighborhood mosques beyond the control of the state, where outsiders can easily move in to take over and preach their brand of Islam.

 

FINES AND JAIL

The Muslim Brotherhood, until last year Egypt's best-organized movement, has been driven underground, with most of its leaders in jail or in hiding. It denies any involvement in lethal attacks on security forces since Mursi's overthrow.

 

According to the decree, "only designated specialists at the Ministry of Religious Endowments and authorized preachers from al-Azhar shall be permitted to practice public preaching and religious lessons in mosques or similar public places."

 

Only al-Azhar officials and graduates as well preachers from the ministry or the grand mufti's office will be allowed to wear the trademark "turban" - a red hat with a white cloth band - and robes that designate an al-Azhar cleric, it said.

 

Unauthorized preachers face fines jail terms up to a year and fines up to 50,000 Egyptian pounds ($7,000). Wearing or denigrating al-Azhar garments in any way will carry similar penalties, it added.

 

Galal Mora, secretary-general of the Nour Party, an Islamist group that backed the army's removal of Mursi, told Reuters the group approved of the law and urged respect for it.

 

The religious endowments ministry has been keeping a close eye on authorized imams as well. The state news agency MENA reported on Saturday that it had removed three government appointed imams from their positions in Minya province.

 

Accused of mixing religion and politics, the men will be switched to administrative jobs and be banned from giving Friday sermons, it said.

The Muslim Brotherhood's worldwide website, which still operates despite the clampdown on the movement in Egypt, protested against the removal of the three imams.

 

(Additional reporting by Ali Abdelati and Mohamed Abdella; Editing by Tom Heneghan

ABOUT ALTAF HUSSAIN

الطاف حسین بالآخر گرفتار

ہوگئے۔ متحدہ اور الطاف حسین کے لیے یہ واقعہ بھی تاریخی ہے۔ الطاف حسین کو برطانوی حکومت نے شہریت دی وہ ایک تاریخی عمل تھا اس تاریخی واقعے پر انہوں نے برطانیہ کا پاسپورٹ ہاتھ میں پکڑ کر تصویر دکھائی اور مسرت کا اظہار کیا۔ یہ سب کچھ سازشوں کی بازگشت میں ہی ہوا۔ سب ہی کو معلوم ہے کہ ’’الطاف حسین اور سازش‘‘ یہ دو الفاظ اگرچہ بہت جدا ہیں ان میں کوئی مماثلت بھی نہیں ہے تاہم ایسا لگتا ہے کہ یہ دونوں الفاظ ایک دوسرے کے لیے لازم و ملزوم ہوچکے ہیں۔ الطاف حسین اور متحدہ کے خلاف جتنی سازشیں ہوئیں یا بیان کی گئیں ہیں اس کی کوئی اور مثال سیاسی دنیا کی تاریخ میں نہیں ملتی۔

خیر ابھی ذکر ہے الطاف حسین کی گرفتاری کا، جو متحدہ اور اس کے کارکنوںکے مطابق تازہ ’’سازش‘‘ ہے۔ تاہم کراچی سمیت ملک بھر کی اکثریت ماسوائے متحدہ کے کارکنوں کے اسے سازش ماننے کے لیے تیار نہیں ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ یہ کارروائی برطانیہ میں ہوئی ہے اور برطانیہ ایسا ملک نہیں ہے جہاں بغیر ثبوت کے کسی شخص کو گرفتار کیا جاسکے۔ پوچھ گچھ کے لیے برصغیر پاک و ہند کا طریقہ نہیں اپنایا جاتا بلکہ الزام ثابت ہونے تک کسی بھی ملزم پر کسی بھی قسم کا جسمانی تشدد نہیںجاتا۔

متحدہ قومی موومنٹ اور الطاف حسین بلا شبہ اپنی تاریخ کے بدترین دنوں میں داخل ہوچکے ہیں، سیاسی معاملات بھی متحدہ کے ہمیشہ ہی متنازع رہے ہیں، پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ کی حکومتوں میں متحدہ حکومت میں رہتے ہوئے حکومتی پالیسیوں کی مخالفت کرتی رہی۔ متحدہ یہ تو دعویٰ کرتی ہے کہ اس کے کروڑوں حامی ہیں لیکن اس نے کبھی بھی شفاف الیکشن کا عملاً مظاہرہ نہیں کیا۔ کراچی، حیدرآباد، اور میرپور خاص کے جتنے لوگ متحدہ کے حامی ہیں اس سے کہیں زیادہ اس کے مخالف بھی ہیں۔ وہ ضرورت کے تحت مہاجر نعرہ لگاتی ہے لیکن اس میں بھی کوئی شک نہیں کہ سب سے زیادہ مخالف مہاجر ہی ہیں۔ متحدہ کی سیاست سے سب سے زیادہ مہاجر متاثر ہوئے ہیں۔ متحدہ مہاجروں کے تحفظ کے لیے بنی تھی لیکن انہیں ہی غیر محفوظ کردیا۔ متحدہ کے کارکنوں کی لوگ مخالفت کریں یا نہ کریں لیکن ان سے محبت نہیں کرتے۔ اسے اتفاق کہیں یا اللہ کا نظام، الطاف حسین نے گزشتہ انتخابات کے بعد 17مئی کو اپنے خطاب میں رابطہ کمیٹی کے اراکین پر برہمی کا اظہار کیا اور ان کی کراچی کمیٹی سے پٹائی کروائی ساتھ ہی اعلان کیا کہ اب پوری تنظیم کا سخت احتساب ہوگا، انہوں نے رابطہ کمیٹی کو تحلیل کیا اور ازسرنو کمیٹی بنائی ہے۔ اس واقعہ کے بعد کئی معزز رہنماء ناراض ہوئے اور گھروں کو چلے گئے، دوسرے ہی دن الطاف حسین نے دوبارہ خطاب کرتے ہوئے کراچی کمیٹی کو ختم کردیا اس کمیٹی کے سرکردہ حماد صدیقی اور دیگر اپنی معطلی یا برطرفی کے بعد اطمینان سے دبئی منتقل ہوگئے۔ اسی تاریخی خطاب میں الطاف حسین نے کراچی میں اپنے کارکنوں پر اربوں روپے مالیت کے پلاٹوں کی ’’چائنا کٹنگ‘‘ میں ملوث ہونے کا واضح الزام عائد کیا تھا۔ الطاف حسین کی اس تقریر نے بہت سے رہنمائوں کو دور کیا ان رہنمائوں کو صرف یہ شکایت ہے کہ انہیں عام کارکن کے سامنے بھی ’’برا بھلا‘‘ کہہ دیا جاتا ہے۔

اس واقعے کے بعد انیس قائم خانی، مصطفی کمال اور بہت سے کارکنان متحدہ سے دور ہوگئے۔ بعد ازاں سلیم شہزاد نے بھی تحریک کو خیرباد کہہ دیا۔

الطاف حسین آج برطانوی پولیس کے لاک اپ میں ہیں تو حیرت کی بات نہیں۔ وہ 1988میں بھی حیدرآباد پکا قلعہ کے تاریخی جلسے کے بعد گرفتار ہوکر کراچی کے سی آئی اے پھر ڈاکس پولیس اسٹیشن کی لاک اپ میں دن گزار چکے ہیں۔ اس وقت بھی ایم کیو ایم نے پریس ریلیز کے ذریعے یہی موقف اختیار کیا تھا کہ اس کے قائد اور اس کے خلاف سازشیں ہورہی ہیں۔

متحدہ کی طاقت کے اظہار اور جھوٹ کو سچ ظاہر کرنے کی پالیسی نے اسے شہرت تو بہت دی اور مگر وہ اس طرح مقبول نہ ہوسکی جس طرح کے وہ دعوے کرتی رہی۔ اس پالیسی نے متحدہ کو نقصان بھی پہنچایا مگر یہ سلسلہ جاری رہا، حد تو یہ کہ جب الطاف حسین کو لندن پولیس گرفتار کرکے لے جاچکی تھی تب بھی متحدہ کے طویل عرصے تک خاموش رہنے والے ندیم نصرت ٹیلی وژن پر آئے اور انہوں نے یہی کہا کہ الطاف حسین گھر پر ہیں انہیں گرفتار نہیں کیا گیا پولیس ان سے بات چیت کررہی ہے۔

الطاف حسین کارکنوں کو اپنی جس تربیت کا ذکر کرتے ہیں اور ان کے رہنما اور کارکن الطاف حسین کی تربیت کا حوالہ دیے بغیر کوئی بات مکمل نہیں کرتے، کیا ان کی یہی تربیت ہے کہ ’’جھوٹ اتنا بولو کہ سچ لگے؟‘‘ 

مصطفی عزیز آبادی جو الطاف حسین کے قریبی ساتھی ہیں اور زیادہ قریب رہتے تھے (الطاف کی گرفتاری سے قبل تک) جھوٹ بولنے کے ایسے ماہر ہیں کہ جب لندن پولیس نے الطاف کے گھر پر دسمبر 2012 میں پہلا چھاپا مارا تو انہوں نے بی بی سی ریڈیو سے بات کرتے ہوئے اس چھاپے سے مکمل انکار کردیا اور اپنے جواب میں وزن پیدا کرنے کے لیے یہ بھی کہہ دیا کہ ’’اخبار والے نہ جانے کہاں سے یہ الٹی سیدھی خبریں لاکر چلا دیتے ہیں‘‘۔ مصطفی بہت معصوم ہیں مجھے اس شخص سے بہت محبت ہے کیوںکہ میں ان کے والدین سے بہت محبت کرتا ہوں اور ان کی عزت کرتا ہوں۔ مصطفی کے والدین اور چار بھائیوں کا تعلق کبھی بھی عزیزآباد سے نہیں رہا بلکہ وہ آج بھی لانڈھی میں اپنے 80 گز کے گھر ہی میں رہتے ہیں۔ مجھے یقین ہے کہ مصطفی کے والدین اور بڑے بھائی تو کبھی عزیزآباد بھی نہیں گئے ہوںگے۔ لیکن مصطفی کو الطاف حسین کی وجہ سے عزیزآباد سے ایسی محبت ہوئی کہ انہوں نے اپنا نام مصطفی علی سے مصطفی عزیزآبادی کرلیا۔

بات ہورہی ہے کہ اب کیا ہوگا؟ کیا الطاف حسین جیل سے متحدہ کی قیادت کریں گے؟ آج متحدہ بند گلی میں پہنچ چکی ہے تو اس لیے نہیں کہ الطاف حسین گرفتار ہوگئے بلکہ اس لیے کہ متحدہ کے قائد نے اسے اپنی ذات سے آگے بڑھنے نہیں دیا۔ نتیجہ میں ’’جوقائد کا غدار ہے وہ موت کا حق دار ہے‘‘ اور ’’منزل نہیں رہنما چاہیے‘‘ کے نعرے تخلیق کیے گئے۔ آج قائد ’’لاک اپ میں اور کارکن سڑکوں پر ہیں‘‘۔ کیا اسی بات کے لیے 32 سال سے جدوجہد کی جارہی تھی؟؟

الطاف حسین اور متحدہ کے بارے میں ہمارے دانش ور اور بڑے بڑے صحافی بہت محتاط تجزیے کرتے ہیں اور لوگوں کو اس معاملے میں سچ اور حق بتانے سے گریز کرتے ہیں، اس کی وجہ، کے بارے میں صحافی اور دانش ور نجم سیٹھی کہتے ہیں کہ ’’ہاں میں ڈرتا ہوں کیوںکہ مجھے بھی جینا ہے‘‘۔

سوال یہ ہے کہ جب ہر کوئی ہر سطح پر متحدہ سے ڈر رہا ہے تو اس کیا وجہ ہے؟ 

صحافی ولی بابر کیس میں جن لوگوں کو سزائیں ہوئی وہ کون ہیں اور متحدہ کے کارکن صولت مرزا جیل میں پھانسی کی سزا کا انتظارکرتے ہوئے اس سے بچنے کی دعائیں کررہے ہیں تو کس کی وجہ سے؟ 

کڑوا سچ یہ ہے کہ الطاف حسین نے دانستہ یا نا دانستہ مہاجر قوم کی دیانت، ثقافت، شرافت، علمیت اور اخلاقیات کو بری طرح متاثر کیا ہے۔

الطاف حسین کو یہ ثابت کرنا چاہیے تھا کہ وہ قوم، اپنے مشن اور تحریک سے مخلص ہیں لیکن ہر کڑے وقت میں انہوں نے صرف اپنے آپ کو بچایا اور خوف زدہ لوگ ان کی ہاں ہاں ملاتے رہے۔ انہوں نے برٹش پاسپورٹ ملنے کے بعد پاسپورٹ دکھاتے ہوئے جو وکٹری کا نشان بناکر تصاویر کھنچوائی تھیں وہ آج ایک نئی تصویر بن چکی ہے۔ الطاف حسین کا جھوٹ آج ان کے سر پر آچکا ہے، الطاف ہمیشہ یہ کہتے رہے کہ ’’مجھ پر یہ الزام لگایا جاتا رہا کہ میں نے اپنی جائداد بنالی جب کہ میری کوئی جائداد نہیں ہے کوئی گھر نہیں ہے ماسوائے عزیز آباد کے ایک سو بیس گز کے گھرکے، جب کہ ان کی گرفتاری لندن کے جس بنگلے سے ہوئی وہ ان کے الفاظ کی نفی کرتا ہے۔ یہ سچ ہے کہ سیاست میں سچ اور جھوٹ، ایمان داری اور بے ایمانی کی اہمیت نہیں ہوتی بلکہ سیاست کی اپنی زبان ہوتی اور اس کا اپنا طور طریقہ ہوتا ہے۔ مگر یہ بھی تو حقیقت ہے کہ متحدہ نے جس زبان، جس طریقہ کار کو استعمال کیا دنیا بھر کی سیاست میں اس کی مثال نہیں ملتی بلکہ یہ بھی ایک ’’تاریخی مثال‘‘ ہے۔

الطاف حسین عمر کے جس حصے میں داخل ہوچکے ہیں وہاں اب صرف عمر کی اہمیت ہے۔ شاید یہی وجہ ہے کہ اسکاٹ لینڈ یارڈ نے ان کی گرفتاری کی اطلاع ’’ایک ساٹھ سالہ‘‘ شخص کے عنوان سے دی ہے اس نے یہ نہیں کہا کہ متحدہ کے قائد یا کروڑوں لوگوں کے قائد کو ہم نے گرفتار کرلیا گیا ہے۔ الطاف حسین کی گرفتاری پر ان کے کارکن یا چاہنے والے اسی ردعمل کا اظہار کررہے ہیں جس کا درس الطاف حسین دیتے رہے لیکن کیا اس احتجاج سے الطاف حسین قانونی کارروائی سے بچ سکیں گے ؟ ایسا لگتا نہیں ہے کیوںکہ برطانیہ نے کراچی میں موجود اپنا ہائی کمیشن بند کردیا ہے اور برطانوی حکومت نے اپنے شہریوں کو مشورہ دیا ہے کہ کراچی کا دورہ کرنے سے گریز کریں۔ برطانیہ کے ان اقدامات سے لگتا ہے کہ آنے والے دنوں میں الطاف حسین کے خلاف کارروائی مزید آگے بڑھے گی اور اس کا اختتام حتمی قانونی نتیجہ کے مطابق ہی ہوگا۔

الطاف حسین کی گرفتاری کے حوالے سے عام مہاجروں میں سوال اٹھ رہا ہے جب کہ غیر مہاجر بھی طنزیہ انداز میں یہ سوال پوچھ رہے ہیں کہ ’’مہاجر سیاست کا اب کیا ہوگا؟‘‘ اس کے جواب میں صرف یہی کہہ سکتا ہوں کہ سیاست یا تحریکیں شخصیتوں کی نہیں قوم کی ہوتی ہیں جب تک دیگر زبانوں کے حوالے سے لوگ سیاست کرتے رہیں گے اس وقت تک مہاجر سیاست بھی رہے گی اور ثقافت کا بھی پرچار ہوگا۔ اگر کسی کی یہ خواہش ہے کہ مہاجر سیاست ختم ہوجانی چاہیے تو ان لوگوں کو بھی دیگر زبانوں کی سیاست کا فروغ بند کرنا ہوگا۔ تعصب سے گریز کرنے کا درس دینے والوں کو دیگر زبانوں کے لوگوں کی طرف بھی توجہ دینی چاہیے۔ حکومت کو کراچی کے شہریوں اور لوگوں کے مسائل ہنگامی بنیادوں پر حل کرنا چاہییں، امن و امان، روزگار، سستی تعلیم و رہائشی اسکیمیں کراچی کا ڈومیسائل رکھنے والوں اور حقیقی کراچی والوں کے لیے فوری متعارف کرنی چاہییں، تعمیراتی منصوبوں کو فوری مکمل کرانا چاہیے ۔

 

 

 

محمد انور 

  ISLAMIC SHARIAH

IN MALI

مالی میں شریعت اسلامی کی علمبردار، انصارالدین، کی کامیابیوں نے امریکا و یورپ اور افریقی حکمرانوں کی نیند حرام کردی ہے۔

1240192 مربع کلومیٹر رقبے پرمشتمل شمالی مغربی افریقہ کیا اس ملک کی آبادی 14517176 ہے۔ 80 فی صد سے زیادہ مسلمان ہیں، دو فی صد عیسائی اور 18 فی صد مظاہر پرست ہیں۔ 6 اپریل 2013 کو شمالی مالی میں، نیشنل مومنٹ فار لبریشن آف اوزاد، یعنی NMLA نے، اوزاد، کی آزادی کا اعلان کردیا۔ یہ تنظیم سیکولراور قوم پرست نظریات کے علمبردار ہے۔ اسلام پسندوں نے، انصارالدین، کے نام سے تنظیم قائم کی اور مالی کو ایک اسلامی ریاست بنانے کے لیے اپنی جہادی سرگرمیوںکا اعلان کردیا۔ اس نے

NMLA

 کے اعلان آزادی کو مسترد کردیا۔ میڈیا انصارالدین کو ،، اسلامک مغرب کی القاعدہ،، قرار دیتا ہے۔ 22 مارچ کو فوجی بغاوت کے نتیجے میں نئی حکومت قائم ہوئی۔یکم اپریل کو انصارالدین نے مالی کے ایک بڑے شمالی شہر گائو پر قبضہ کرلیا۔ دو اپریل کو ایک دوسرے اہم شہر ٹمبکٹو پر بھی انصارالدین کا قبضہ ہوگیا۔ انصارالدین کے کمانڈر عمر نے واضح کیاکہ،، ہم بغاوت اور علیحدگی تحریک کیخلاف ہیں۔

 ہماری جدوجہد صرف اسلام کی سربلندی کے لیے ہے۔ہم کسی عرب کو مانتے ہیں نہ تو آرگ

 

(قبیلہ)

 کو، سفیدکونہ کالے کو،بلکہ صرف اور صرف اللہ کو،،

NMLA

 

 کو اپنی حیثیت کا اندازہ ہوگیا کیونکہ ،،اوزاد،،کی اکثریت نے انصارالدین کی حمایت کردی اور بڑے شہر بھی اسی کی کنٹرول میں تھے۔ 26 مئی کو گائو شہرمیں معززین شہر کی موجودگی میں

NMLA

 کی قیادت نے انصارالدین کیساتھ ایک معاہدے پر دستخط کردئیے جس کے تحت دونوں گروپوں نے اوزاد میں شریعت کے نفاذ پر اتفاق کرلیا۔ اوزاد کو اسلامی امارت اوزاد،، کو قرار دیدیا گیا۔ اوزاد ، مالی تقریبا 60 فی صد شمالی علاقے پر مشتمل ہے۔ حکومتی معاملات چلانے کے لیے ایک عبوری کونسل بنانے پر اتفاق ہوا جس کے بارہ ارکان میں سے دو تہائی انصارالدین اور ایک تہائی

NMLA

 کے لیے طے ہوئی۔ دونوں جماعتوں نے اتفاق کیا کہ امارت اسلامی اوزاد کے لیے اقوام متحدہ کی رکنیت حاصل نہیں کی جائیگی اور نہ اس کی سرگرمیوں میںکسی قسم کا حصہ لیا جائے گا کیونکہ یہ ادارہ اصولا ،، جہاد،، کو مسترد کرتا ہے ۔ کونسل کا سربراہ انصارالدین کا امیر جب کہ

NMLA

 کا نمائندہ اسکا ڈپٹی ہوگا۔

مالی کی عبوری حکومت نے اس معاہدے کو مسترد کردیا اور دو جماعتوں کے اتحاد کو امن کے لیے خطرہ قرار دے دیا۔ اردگردکے ممالک بھی مضطرب ہوگئے۔ انہوں نے فوری طور پر NMLA

 کی قیادت سے رابطے قائم کیے اور پارٹی کی اندر لابسٹ بھی بھیج دئے ۔ ڈالروں نے اثر دکھایا اور ایک ہفتہ بھی نہ گزر پایا تھاکہ

NMLA

 نے کہہ دیا کہ یہ معاہدہ سیکولر نظریات کیخلاف ہے، ہم اسکی توثیق نہیں کرسکتے ۔ نائیجر، فرانس اور 15افریقی ممالک پر مشتمل،، اکنامک کمیونٹی آف ویسٹ افریقن سٹیٹس،، کے نمائندوںنے

NMLA

 کو یقین دہانی کرائی کہ اگر وہ انصارالدین سے اتحاد ختم کردے تو وہ ،،اوزاد،، کی آزادی کی حمایت کریںگے۔ 

نائیجر کے صدر نے باقاعدہ مہم شروع کردی کہ اس نے کہا ہمارے پاس اطلاعات ہیں کہ شمالی مالی میں پاکستان اور افغانستان کے مجاہدین آکر مغربی افریقہ بھرتی کیے گئے مجاھدین کو تربیت دے رہے ہیں۔ اس نے اقوام متحدہ سے مطالبہ کیا کہ اگر شمالی مالی میں امن مزاکرات ناکام ہوں تو طاقت استعمال کی جائے۔افریقن یونین نے بھی یہ مطالبہ دہرایا ہے۔ اس نے کہا کہ ،،مالی میں فوجی مداخلت وقت کی تقاضا ہے۔ ،، روس نے کہا کہ فوجی مداخلت سے پہلے پابندیاں لگائے جائے۔ 

پیرس میں فرانسیسی صدر کیساتھ ملاقات کے بعد نائیجر صدر نے کہا کہ،، مالی کی صورت حال بین الاقوامی خطرہ ہے۔اسکا جواب عالمی برادری کی طرف سے آنا چاہیے۔ نائیجر صدر نے کہا کہ شمالی مالی میں جہادی اور اسمگلرمنشیات کی طاقت نمایاں ہیں۔ 15 افریقی ممالک پر مشتمل،، اکنامک کمیونٹی آف ویسٹ افریقن سٹیٹس،،

ECOWAS

 ،، مالی میں فوج بھیجنے کے لیے تیار بھیٹی ہے۔ مگر اس کے لیے سرمایہ کی ضرورت ہے ۔ سرمایہ بھی مل جائے تو مالی کے صحرا میں مجاہدین کیساتھ جنگ کے لیے ،،تجربہ وتربیت،،کہاں سے لائیں گے۔ طاغوتی قوتیںمالی کے مجاہدین کو کچلنے کے لیے اسی طرح متحرک ہیں جس طرح وہ افغان کے خلاف متحرک و متحد ہوئی تھیں۔ مالی کے مجاہدین بھی مقابلے کے لیے افغان طالبان کی طرح پر عزم ہیں۔ 

 

 

 

 محمدصدیق مدنی 

 

WEST ENMITY

AGAINST MUSLIMS  

وسیع پیمانے پر تباہی کے الیکشن

دنیا کو کون سی چیز زیادہ نقصان پہنچا رہی ہے۔ جمہوریت یا اسلام… جہاں کہیں اسلام یا اسلامی قوتیں طاقت حاصل کرنے لگتی ہیں یا مقبولیت حاصل کرتی ہیں جمہوریت کے دعویداروں کو تکلیف شروع ہوجاتی ہے۔ بلکہ پیٹ میں مروڑ ہونا شروع ہوجاتا ہے سب سے پہلے سوڈان میں اسلامی تحریک کی کامیابی پر تکلیف ہوئی اور بالآخر سوڈان کے دو ٹکڑے کر کے ہی سکون حاصل ہوا۔ پھر الجزائر میں عباس مدنی کی قیادت میں اسلامی تحریک نے 77 فی صد ووٹ حاصل کرلیے تو فوج کے ذریعے انتخابات ختم کروا کر قتل وغارت کا وہ بازار گرم کرایا کہ لوگ اسلام اور جمہوریت دونوں کو بھی بھول گئے ایران کے انقلاب کو بھی تباہ کرنے کی کوشش کی گئی لیکن چوںکہ وہ صرف شعیہ انقلاب تھا اس لیے اپنے قلع میں محفوظ رہا۔ افغانستان میں طالبان کی کامیابی اور مکمل امن وامان کسی کو نہیں بھایا اور پوست کی کاشت صفر ہوتے دیکھنے کے باوجود بامیان کے بتوں کے نام پر ان کے خلاف کارروائی شروع کردی گئی پھر 9/11 ہوگیا اور امریکا نے لمحوں میں سارا ملبہ افغانستان پر ڈال کر حملہ بھی کردیا۔ پھر افغانستان میں جو قتل وغارت ہوا آج تک جاری ہے۔ 

حالیہ برسوں میں مصر کے انتخابات تو سب سے بڑی مثال بن گئے ہیں۔ مصری عوام نے صدر حسنی مبارک کو تخت سے اتار پھینکا اور تحریر اسکوائر اتنا مقبول ہوا کہ پاکستان میں بھی یار لوگوں نے اس نام کو پامال کرنے میں کوئی کسر نہیں اٹھا رکھی۔ بہرحال مصر میں اس کے بعد انتخابات ہوئے اور صدر محمد مرسی نے انقلابی اقدامات کے ذریعے مصر کو عالمی بینک اور دیگر اداروں کی مدد کے بغیر ہی معاشی استحکام دینا شروع کیا تو سب ہی کے پیٹ میں مروڑ اٹھا اور محمد مرسی جو سادگی میں ایران کے احمدی نژاد سے بھی زیادہ مقبول ہوگئے تو ان کی حکومت کے خلاف فوجی ایکشن کرایا اور جمہوریت کے خلاف ایک اور اسلامی ملک میں فوجی ایکشن کے ذریعے قتل وغارت کی ابتدا ہوئی یا سلسلہ جاری رہا اور اب تک جاری ہے۔ ایک رات میں رابعہ عدویہ میں 2 ہزار سے زائد انسانوں کو ہلاک کردیا گیا۔ آج بھی درجنوں افراد روز ہلاک ہورہے ہیں۔ آگے چلیں مسلم ممالک سے نکلیں بھارت کا رخ کریں تو پتا چلے گا کہ مسئلہ جمہوریت نہیں مسلمان ہیں گجرات کے قتل عام کے ذمے دار نریندر مودی کو امریکی ویزا دینے سے انکار کیا گیا۔ ان پر سفری پابندیاں عائد کی گئیں لیکن جوں ہی نریندر مودی نے انتخابات میں کامیابی حاصل کی امریکی رویہ ہی بدل گیا۔ مسلمانوں کے معروف دشمن مودی کو مبارکباد دے دی گئی۔ اور اب مودی کو دورۂ امریکا کی دعوت دے دی گئی۔ بات صرف جمہوریت کی نہیں بلکہ اسلام کی ہے الجزائر، سوڈان، مصر، ایران۔ امریکا اور یورپ نے ترکی پر بھی حملہ کیا لیکن ترک قیادت نے معاملات سنبھال لیے ورنہ کوشش یہی تھی کہ ترکی میں بھی قتل وغارت شروع ہوجائے۔ لیکن ناکامی ہوئی۔ اب ذرا جمہوریت پسند امریکا کا چہرہ بھی دیکھ لیں امریکا نے ہزاروں انسانوں کے قاتل جنرل عبدالفتاح السیسی کی کھلی حمایت کی اسے صدر بنوانے کے لیے کروڑوں ڈالر خرچ کیے۔ امریکا ساری دنیا میں موت کی سزا ختم کرانا چاہتا ہے لیکن بنگلہ دیش میں عبدالقادر ملا کی پھانسی پر اسے کوئی تکلیف نہیں ہوئی۔ ایک پولیس والے کے قتل پر 529 مصری شہریوں کو سزائے موت سنانے پر امریکا کے کان پر جوں تک نہیں رہنگی۔ دنیا بھر کے ظالم جابر اور آئین شکن امریکا کے دوست جنرل مشرف امریکا کے دوست جنرل السیسی امریکا کے دوست اور اب مودی امریکا کے دوست… حسینہ واجد امریکا کی دوست: پتا یہ چلا کہ دوستی اور دشمنی کا تعلق جمہوریت سے نہیں بلکہ مسلم دشمنی سے ہے۔ جہاں جہاں مسلم دشمن حکمران اور جرنیل ہیں وہ امریکا کے دوست ہیں۔ 

یہ بات بھی قابل غور ہے کہ دنیا بھر میں انتخابات ہوئے ہیں دھاندلیاں ہوئی ہیں لیکن جہاں کہیں مسلمانوں کے خلاف دھاندلی ہوئی ہے امریکا وہاں دھاندلی کرنے والوں کے ساتھ ہوتا ہے۔ اس کے سارے اصول جوتی کی نوک پر ہوتے ہیں۔ اور انتخابات عوام کی نمائندگی کے بجائے کھیل بن جاتے ہیں۔ مصر وغیرہ میں تو انتخابات عراق کے وسیع پیمانے پر تباہی کے ہتھیاروں کی طرح وسیع پیمانے پر خونریزی کے انتخابات بن گئے۔ اب یہ طے پایا کہ جہاں کہیں مسلمان انتخابی راستے سے بھی حکومت تک پہنچنے کی کوشش کریں وہاں انتخابات کو وسیع پیمانے پر تباہی کا الیکشن بنادو

… 

 

 

مظفر اعجاز

CONTRADICTIONS

OF NAWAZ SHARIF

مرزا یاس یگانہ چنگیزی نے فرمایا ہے   ؎

 

چتونوں سے ملتا ہے کچھ سراغ باطن کا

چال سے تو ظالم پر سادگی برستی ہے

 

دیکھا جائے تو میاں نوا زشریف کا معاملہ بھی یہی ہے۔ میاں نواز شریف کے بیانات کو دیکھا جائے تو میاں نواز شریف قوم کے غم میں ڈوبے ہوئے ہیں۔ میاں صاحب کی تقریریں بتاتی ہیں کہ میاں صاحب کو پاکستان کے مفاد کے سوا کچھ عزیز نہیں۔ میاں صاحب کے اعلانات بتاتے ہیں کہ میاں صاحب اصولوں پر کبھی سودے بازی نہیں کرسکتے۔ تاہم گاہے گاہے ایسی خبریں بھی سامنے آتی رہتی ہیں جن سے میاں صاحب کا باطن زیادہ عیاں ہو کر سامنے آجاتا ہے۔ 

روزنامہ ڈان کی ایک خبر کے مطابق میاں نواز شریف کے لیے 22 کروڑ روپے کی دو عدد BMW

 کاریں خریدیں گئی ہیں۔ پاکستان کے حکمرانوں کی تاریخ کے تناظر میں اس خبر کی کوئی بھی حیثیت نہیں۔ ہمارے قومی وسائل کے تناظر میں ساڑھے 22 کروڑ روپے کی حیثیت اونٹ کے منہ میں زیرے سے بھی کم ہے۔ لیکن اس کے باوجود بھی یہ خبر بہت کچھ کہہ رہی ہے۔ 

اطلاعات کے مطابق وزیراعظم کے سفر کے لیے مہنگی ترین گاڑیوں کا بیڑا موجود ہے اور وزیراعظم کے لیے نئی گاڑیاں خریدنے کی کوئی ضرورت نہیں۔ تاہم اس کے باوجود میاں صاحب کے لیے ساڑھے 22 کروڑ روپے کی گاڑیاں خریدی گئی ہیں۔ میاں نواز شریف کو اقتدار میں آئے ہوئے ابھی صرف ایک سال ہوا ہے اور ایک سال میں آدمی زیر استعمال گاڑیوں سے اکتا نہیں سکتا اور اسے نئی گاڑی کی ضرورت محسوس نہیں ہوسکتی مگر میاں نواز شریف ایک سال میں اپنے زیر استعمال گاڑیوں سے تھگ گئے ہیں اور انہیں نئی گاڑیوں کی ضرورت محسوس ہوگئی ہے۔ میاں نواز شریف کے اقتدار میں آتے ہی قرض پر قرض لینا شروع کردیا ہے۔ ان کا اصرار ہے کہ ملک کی معاشی حالت اچھی نہیں اور قرض لیے بغیر ملک نہیں چلایا جاسکتا۔ لیکن اگر ایسا ہی ہے تو کسی ضرورت کے بغیر 2 کاروں پر ساڑھے 22 کروڑ روپے صرف کرنے کا کیا اخلاقی اور معاشی جواز ہے؟ تاریخ میں اکثر ایسا ہوتا ہے کہ کوئی سیاسی رہنما اقتدار میں آتا ہے اور اس سے کوئی ’’کارنامہ‘‘ سرزد ہوجاتا ہے چنانچہ اس کے لیے جشن برپا کرنا پڑتا ہے اور جشن میں بہت کچھ ہوتا ہے مگر میاں صاحب جب سے اقتدار میں آئے ہیں ان سے کوئی کارنامہ سرزد نہیں ہوا۔ چنانچہ سوال یہ ہے کہ میاں صاحب نے خود کو ساڑھے 22 کروڑ روپے کی گاڑیوں کا تحفہ کس مد میں دے ڈالا ہے؟ میاں نواز شریف ملک کے مال دار ترین لوگوں میں سے ہیں اور پرتعیش گاڑیوں کا سفر ان کے لیے ’’معمول کی بات‘‘ ہے۔ لیکن جیسا کہ ظاہر ہے اس کے باوجود ابھی تک میاں صاحب کی طبیعت پرتعیش گاڑیوں کے سفر سے سیر نہیں ہوئی چنانچہ ان کی زبان پر ھل من مزید کا نعرہ ہے۔ اہم بات یہ ہے کہ میاں صاحب کو نئی اور مہنگی گاڑیوں کا عیش سرکاری خرچ پر درکار ہے حالاںکہ وہ اپنی جیب سے ساڑھے 22 کیا ساڑھے 122 کروڑ کی گاڑیاں خرید سکتے ہیں۔ لوگ کہتے ہیں کہ جو لوگ غربت میں پلتے بڑھتے ہیں ان کے لیے دولت اور اقتدار کا عیش ایک ایسا مرض بن جاتا ہے جو ان کی پوری شخصیت پر حاوی ہوجاتا ہے۔ لیکن ہمارے معاشرے میں تو متوسط طبقے کیا مال دار لوگوں کے لیے بھی دولت اور اقتدار کا عیش ایک مرض ہے۔ جامعہ کراچی میں ایک پروفیسر صاحب وی سی بنے تو انہوں نے اگلے دن اپنی سرکاری رہائش گاہ کے مالی سے کہا کہ اب تم ہمارے لیے بھی صبح ہی صبح پھول لایا کرو۔ یعنی ان کی سب سے بڑی آرزو یہ تھی کہ وہ وی سی بنیں تو وی سی ہائوس کا مالی ان کے لیے صبح ہی صبح پھول لائے اور انہیں بتائے کہ وہ کتنے اہم آدمی بن گئے ہیں۔ ایم کیو ایم کو پہلی بار انتخابی کامیابی ملی تو کئی یورپی ملکوں کے سفر اگلے دن نائن زیرو پہنچ گئے۔ اس پر ایم کیو ایم کے ایک مرکزی رہنما نے فرمایا کہ اب بڑے بڑے لوگ ہم سے ملنے آیا کریں گے۔ اس بیان سے ایم کیو ایم کی ذہنی ونفسیاتی عسرت پوری طرح عیاں ہورہی تھی۔ دیکھا جائے تو میاں نواز شریف کہے بغیر یہ کہتے محسوس ہورہے ہیں کہ ہم وزیراعظم بنیں گے تو پہلے سال میں ہی ہم اپنے لیے نئے ماڈلز کی دو

BMW

 خریدیں گے۔ ان حقائق کو دیکھا جائے تو میاں صاحب کی شخصیت کی کیسی تصویر ہمارے سامنے آتی ہے؟ آئیے یگانہ کا شعر ایک بار پھر پڑھ لیں۔ 

چتونوں سے ملتا ہے کچھ سراغ باطن کا

چال سے تو ظالم پر سادگی برستی ہے

لیکن یہ تو میاں صاحب کی صرف ایک چتون کا قصہ ہے۔ 

میاں نواز شریف کے گزشتہ دور حکومت کو یاد کیا جائے تو اس کی ایک مہم نمایاں ہو کر سامنے آجاتی ہے۔ اس دور میں میاں صاحب قرضوں کے خلاف جہاد کرنے والے ایک رہنما کے طور پر سامنے آئے تھے۔ چنانچہ انہوں نے قرض اتارو ملک سنواروں کے عنوان سے پورے ملک میں ایک طوفان برپا کردیا تھا۔ اس بار اقتدار میں آنے سے قبل انہوں نے اعلان فرمایا تھا کہ وہ اقتدار میں آتے ہی کاسۂ گدائی توڑ دیں گے۔ لیکن میاں صاحب اقتدار میں آتے ہی آئی ایم ایف کے قرض پر ٹوٹ پڑے اور انہوں نے قرض بڑھائو ملک چلائو مہم شروع کردی۔ چنانچہ اب قرض کے سلسلے میں میاں صاحب کی پوزیشن یہ ہے کہ وہ قرض کے سخت خلاف بھی ہیں اور اس کے سخت حمایتی بھی۔ میاں صاحب نے اقتدار میں آتے ہی یہ تاثر دیا کہ وہ امن وامان کے قیام کو یقینی بنانے کے لیے وزیرستان میں آپریشن کریں گے۔ مگر پھر اچانک انہوں نے طالبان سے مذاکرات کا فیصلہ کرلیا اور اب سنا ہے کہ فوج میاں نواز شریف کی حمایت سے وزیرستان میں فوجی آپریشن کررہی ہے۔ اس طرح اس سلسلے میں میاں صاحب کی پوزیشن یہ بنی کہ میاں صاحب بیک وقت مذاکرات اور آپریشن کے حق میں ہیں۔ معروف صحافی حامد میر کے گولیاں لگیں تو میاں صاحب ان کی عیادت کے لیے فوراً اسپتال پہنچے لیکن دو دن بعد دبائو پڑا تو وہ آئی ایس آئی کے دفتر پہنچ گئے۔ اسی طرح میاں صاحب کا موقف یہ بنا کہ وہ حامد میر کے ساتھ بھی ہیں اور آئی ایس آئی کے ساتھ بھی۔ یہ تنازع اگلے مرحلے میں جیو اور آئی ایس آئی کا تنازع بن کر سامنے آیا تو معلوم ہوا کہ یہاں بھی میاں صاحب ایک نئی تاریخ رقم کر رہے ہیں۔ یعنی وہ جیو کے ساتھ بھی ہیں اور اس کے حریف کے ساتھ بھی۔ کیا حکمرانی اسی کو کہتے ہیں؟ کیا رہنمائی یہی ہے؟ کیا قیادت اسی چیز کا نام ہے؟ خدا کا شکر ہے کہ میاں صاحب کے دور میں کبھی پاک بھارت جنگ نہیں ہوئی۔ خدانخواستہ ایسا ہوا تو میاں صاحب ایک بار پھر اپنی تاریخ دہرا سکتے ہیں۔ آپ چاہیں تو یاس یگانہ چنگیزی کا شعر ایک بار پھر پڑھ لیں۔

 

شاہنواز فاروقی 

LEGACY OF

GEN. MUSHARRAF

  جنرل پرویز مشرف کا ورثہ

امریکا میں کانگریس کے ارکان اور سابق فوجی افسروں کی جانب سے صدر بارک اوباما پر سخت تنقید ہورہی ہے۔ امریکی صدر پر برہمی کا سبب 5 برس سے قید امریکی فوجیبرگڈال کی 5 طالبان رہنمائوں کے بدلے رہائی ہے۔ بارک اوباما اور وزیردفاع چک ہیگل دونوں اپنے فیصلے کے حق میں دلائل دے رہے ہیں، لیکن یہ تنقید اس بات کی علامت ہے کہ افغانستان میں ’’امریکی مشن‘‘ عملاً ناکام ہوگیا ہے۔ امریکی صدر، وزیردفاع اور حکومت کے دیگر عہدے داران یہ دلیل بھی دے رہے ہیں کہ قطر کی ثالثی سے جنگی قیدیوں کے تبادلے کے سمجھوتے کے بعد افغانستان میں نو کے قریب مستقل فوجی اڈوں اور نظام نو کے بارے میں بھی طالبان سے نتیجہ خیز مذاکرات ممکن ہوسکتے ہیں۔ واضح رہے کہ امریکا افغان طالبان کو دہشت گرد قرار دیتا ہے اور ان کے طے شدہ ضابطوں میں کسی دہشت گرد تنظیم سے مذاکرات کی کوئی گنجائش موجود نہیں ہے۔ اس کے باوجود امریکا کے صدر نے اپنی حکومت کے ارکان کو حکم دیا کہ وہ طالبان کی قید میں موجود اپنے ’’واحد‘‘ فوجی کو رہا کرائیں اور اس کی امریکا نے اپنے طور پر بہت زیادہ قیمت بھی دی ہے۔ امریکا افغانستان پر 40 ملکوں کی فوجوں کے ساتھ قابض ہے اس کے پاس اعلیٰ ترین جاسوسی ٹیکنالوجی بھی ہے اور نشانہ باندھ کر قتل کرنے والے جدید ترین ڈرون کی صلاحیت بھی ہے جس پر اس کا بہت زیادہ اعتماد ہے۔ گزشتہ پانچ برسوں میں وہ اپنی جنگی ٹیکنالوجی، ڈالر کی مدد سے وفاداریوں اور ضمیر کی خریداری کی غیر معمولی اہلیت اور صلاحیت کے باوجود اپنے فوجی بو برگڈال کو تلاش نہیں کرسکا اور ایک بڑی قیمت دے کر اسے رہا کروایا ہے۔ اس سلسلے میں امریکا کی جانب سے یہ عذر لنگ بھی پیش کیا گیا ہے کہ برگڈال کو پاکستان منتقل کردیا گیا تھا حالاںکہ امریکا پاکستان کی حدود میں اپنے جاسوسی نیٹ ورک کی مدد سے اپنے دشمنوں کو کامیابی سے نشانہ بناتا رہا، لیکن امریکی جاسوسی کی اہلیت برگڈال کو تلاش کرنے میں ناکام ہوگئی۔ ایک طرف افغانستان کا یہ منظر ہے اور افغانستان کے مسئلے سے منسلک پاکستان کے قبائلی علاقے بالخصوص شمالی اور جنوبی وزیرستان نئی جنگ کا منظر پیش کررہے ہیں۔ حکومت پاکستان اور عسکری قیادت میں ہم آہنگی کے فقدان نے مذاکراتی عمل کو سبوتاژ کردیا ہے اور دہشت گردی اور بدامنی کے واقعات کا سلسلہ پھر شروع ہوگیا ہے۔ وفاقی دارالحکومت اسلام آباد سے 25 کلومیٹر دور اٹک کی فتح جنگ تحصیل میں ایک فوجی گاڑی کو نشانہ بنایا گیا جس میں کرنل کی سطح کے دو فوجی افسران شہید ہوگئے۔ دوسرا واقعہ باجوڑ میں ہوا ہے جہاں سرحد پار سے فوج کی چیک پوسٹ پر حملہ ہوا جس میں 7 جوان شہید ہوگئے۔ ذرائع ابلاغ کو ٹیلی فون پر دی جانے والی اطلاع کے مطابق تحریک طالبان پاکستان نے ان واقعات کی ذمہ داری قبول کرلی ہے اور اسے مختلف علاقوں میں فضائی بمباری اور کراچی میں سوات سے تعلق رکھنے والے 7 طالبان کی ٹارگٹ کلنگ کا بدلہ قرار دیا گیا ہے۔ مذاکرات میں تعطل کے دوران میں غیر اعلانیہ فوجی آپریشن جاری رہا جس کی وجہ سے بدامنی کے واقعات میں اضافہ ہوگیا ہے۔ یہ سارے واقعات اس بڑے عالمی کھیل کا حصہ ہیں جسے امریکا نے نئی صدی کے لیے ڈیزائن کیا تھا، لیکن حقیقت یہ ہے کہ ان 13 برسوں میں افغان مجاہدین کی مزاحمت نے پورے عالمی نقشے کو تبدیل کردیا ہے امریکی صدر اور ان کی حکومت پر حزب اختلاف ری پبلکن پارٹی، کانگریس کے ارکان اور سابق فوجیوں کی طرف سے تنقید امریکی شکست کا اظہار ہے لیکن ہماری حکمران قیادت کی بے بصیرتی اور غلامانہ ذہنیت نے پاکستان اور اس کی قوم کو جہاد افغانستان کے ثمرات سے محروم کردیا ہے۔ اس کا سب سے بڑا سبب یہ ہے کہ ہمارے حکمران اسلام اور جہاد کے تقاضوں کو پورا کرنے سے اس لیے گریز کررہے ہیں کہ انہیں پرتعیش اور فاسقانہ زندگی چھوڑنا پڑے گی۔ اس لیے وہ اپنے ربّ کو بھی فریب دے رہے ہیں اور اپنی قوم کو بھی، لیکن اصل میں وہ اپنے آپ کو فریب دے رہے ہیں جس کی وجہ سے اللہ نے انہیں آپس کی جنگ کے عذاب میں مبتلا کردیا ہے۔ یہ بات یاد رکھنی چاہیے کہ اہل پاکستان کے اتحاد اور یک جہتی کے لیے پہلا قدم یہ ہے کہ مغربی سرحدوں یعنی قبائلی علاقوں میں امن قائم کرنے کے لیے مذاکراتی عمل شروع کیا جائے۔ اس کے راستے میں آنے والی تمام رکاوٹوں کو دور کیا جائے۔ مذاکرات کے ذریعے قبائلی علاقوں اور افواج پاکستان کا تصادم بہت آسانی سے ختم ہوسکتا ہے اس کے بعد بھی بڑے بڑے مراحل طے کرنے ہیں۔ لیکن اگر فوج کشی پر اصرار جاری رکھا گیا تو اس کا نقصان صرف اور صرف اہل پاکستان کو ہوگا۔ کیا ہم جنرل یحییٰ خان، جنرل نیازی، جنرل ٹکا خان اور جنرل پرویز مشرف کے ورثے سے نجات حاصل نہیں کرسکیں گے؟ فوجی آپریشن، بم دھماکے، خودکش حملے جنرل پرویز مشرف کا ورثہ ہیں جو ہمیں امریکی وار آن ٹیرر کی شکل میں ملا ہے۔